Breaking News
Home / اہم ترین / ارون جیٹلی کی بجٹ تقریر سے لگا کہ ہم ہندوستانی ٹیکس چور ہیں

ارون جیٹلی کی بجٹ تقریر سے لگا کہ ہم ہندوستانی ٹیکس چور ہیں

مرکزی وزیر خزانہ ارون جیٹلی کی جانب سے بدھ کو لوک سبھا میں پیش عام بجٹ 2017-18 کے تجزیہ میں یہ تو خیال رکھا جانا چاہئے تھا کہ آگے پانچ ریاستوں کے انتخابات ہیں اور یہ بھی کہ ابھی ابھی ہم نوٹ بندي کے جال سے نکلے ہیں. مودی جی کی بني اس تحریر سے جیٹلی جی کو نیا پار لگانے کے چیلنج تو تھی ہی، اس لیے بجٹ کا اعتدال پسند نظر آنا لازم تھا۔ اب جبکہ پوری تیاری کے ساتھ اسے پیش کر ہی دیا ہے تو دیکھنا دلچسپ ہو جائے گا، اس کا کتنا فائدہ مل پاتا ہے.مقبول بجٹ پیش کرنے کی قواعد میں پھر بھی وزیر خزانہ بچوں کو تو پورے بجٹ تقریر سے گول کر ہی گئے، جبکہ غذائی قلت اور بچوں کی بے وقت موت کے مقدمات میں ملک کے حالات کوئی کم تباہ کن نہیں ہے، پر وہ حکومت کے ایجنڈے میں نظر نہیں آیا. تعلیم جیسے اہم شعبے کا ایک بار بھی ذکر نہیں کیا، اگرچہ اس کے لیے کافی بجٹ انتظامات کئے گئے ہیں۔ لیکن اس معاملے پر صرف بجٹ ہی نہیں، پالیسی ساز طور پر ایک وژن دینا ضروری لگتا ہے، انکم ٹیکس کی شرح کو بھی 10 فیصد سے پانچ فیصد تک لا کر اس بات کی گنجائش رکھی کہ آنے والے وقت میں یہ بڑھائی جا سکے۔ اس لیے اسے عام لوگوں ون ٹائم فوائد کے نظریے سے ہی دیکھے تو اچھا. یہ ضرور ہے کہ منریگا جیسے قوانین کو حکومت نے بالآخر تسلیم کر لیا اور اس بجٹ میں بھاری اضافہ ہے.گاؤں کی صحت اور نوٹ بندي کے بعد پیدا ہوئے بحرانوں میں یہ کارگر قدم ہے، لیکن زمینی تجربات میں یہ بات سامنے آتی رہی ہے کہ منریگا منصوبہ بندی میں گڑبڑ نہ ہوکر اس عمل میں بھاری رکاوٹ پائی گئی تھی. امید کرتے ہیں کہ منریگا کی سب سے بڑی رکاوٹ اجرت کی تاخیر سے ادائیگی، اس فنڈ کے بعد سے ضرور دور ہو جائے گا. تاہم اس منصوبہ کو ناکام قرار دینا بھی ایک طرح کی سیاسی مجبوری رہی ہے، کیونکہ اسے منموہن سنگھ والی حکومت کے وقت لاگو کیا گیا تھا اور جب آج حکومت اس منصوبہ بندی کے بجٹ میں بھاری اضافہ کرتی ہے، تب اسے یہ الزام لگانے میں تھوڑا سنکوچ کرنا ہی چاہئے کہ منموہن حکومت نے ملک کے لئے کچھ بھی نہیں کیا. لیکن اس سیاسی جملےباجي کے برعکس وہ سب سے بڑا سوال جو نکلے، وہ یہی ہے کہ کیا ہندوستانی ٹیکس چور ہیں.

ملک کے وزیر خزانہ کی تقریر اور ادائیگی دونوں سے ہی لگا کہ ہم اس ملک کے شہری، بہت بڑے کر چور ہیں. نوٹ بندي سے چاہے ملک میں کالے دھن کا انکشاف ہوا ہو یا نہیں ہو، کم از کم جیٹلی جی کے الفاظ میں اتنا تو پتہ چل ہی گیا کہ ‘ہمارا معاشرہ وسیع پیمانے پر تعمیل نہ کرنے والا معاشرہ ہے …’ اس کے دو مطلب ہو سکتے ہیں- یا ہم بہت بڑے چور ہیں اور یہ بھی کہ ہماری وہ حیثیت ہی نہیں ہے. اس میں سے 70 فیصد آبادی کو تو آپ لفظی باہر نکال سکتے ہیں، کیونکہ اسے ہم غربت کی لکیر سے نیچے رہنے والی آبادی کہتے ہیں۔ اس سے ٹیکس کی توقع کرنا بے معنی ہے. اس کے بعد ہم باقی کی 30 فیصد آبادی میں بھی کام آبادی کے اعداد و شمار نکالا جانا چاہئے کہ کتنے لوگ کام میں مشغول ہیں، کتنے لوگوں کو ایسی نوکری مل پاتی ہے، جس میں انہیں کام کرنے کے قابل تنخواہ بھی مل پائے. اعداد و شمار کی بازی گری سے گریز کرتے ہوئے اپنے ارد گرد کے دفتروں کو ہی دیکھ لیں. ایسے میں ہمیں آکسفیم کی وہ رپورٹ بھی یاد آ جاتی ہے، جو بتاتی ہے کہ ہندوستان کے ایک فیصد لوگوں کے پاس پورے ملک کی 58 فیصد ملکیت ہے.

اس رپورٹ کے مطابق بھارت کے صرف 57 لوگوں کے پاس قریب 216 ارب امریکی ڈالر کی جائیداد ہے. یہ رقم ملک کی تقریبا 70 فیصد آبادی کی کل جائیداد کے برابر ہے. ایسے میں اگر کچھ لوگ ہی کر ادا کر پانے کی صورت حال میں ہیں تو باقی لوگوں کی کچھ مجبوری ہی ہونی چاہئے، اس نظریہ سے دیکھیں تو یہ ایک شرمناک صورت حال ہے. ہم آزاد بھارت کے اتنے سالوں میں بھی غیر برابري والے ایک معاشرے کو بنا پائے ہیں. یہ اسی حکومت کی نہیں، ہماری ستر سالوں کی ناکامی کا ثبوت نہیں مانیں تو کیا کریں. لہذا اگر ہم اپنے معاشرے کے ٹیکس دہندگان کا تجزیہ اس سکویڈ کے ساتھ کریں گے تو سچ مچ یہ بہت شرمناک ہے.

جب ایک تجزیہ آپ ایسا کرتے ہیں تو ایک تجزیہ ہم بھی کرتے ہیں. جتنا بھی ٹیکس ہم نے دیا، اس کے ملک کے ذمہ دار لوگ کیا کر رہے ہیں …؟ چلئے، ہم دوگنا ٹیکس دینے کو تیار ہیں . اور یہ بات ہوا میں نہیں، یہ وہی معاشرہ ہے جو ملک پر مصیبت کے وقت اپنا سب کچھ نيوچھاور کرنے کو تیار ہو جاتا ہے، فکر تو یہ ہے کہ اس نيچھاور کی نعمت کو انتظامات سبھال كر ہی نہیں رکھ پاتیں . ملک کو چلانے والے ہی گاڑھے خون کی کمائی کو جب غلط پالیسیوں، کرپشن اور غیر مناسب طور طریقوں سے خرچ ہوتے دیکھتے ہیں تو ان کا خون نہیں کھولتا. اس لئے ضرورت تو اس بات کی بھی ہے کہ جتنا بھی ٹیکس جن ہاتھوں میں دے رہے ہیں، وہ ہاتھ بھی ہمیں اتنا ہی اعتماد دلائیں، کہ ان کا ایک ایک دھیلے کا صحیح استعمال کیا جا رہا ہے.

اس میں وزیر خزانہ نے صرف براہ راست کر والے ٹیکس دہندگان کو نظر میں رکھا ہے، بالواسطہ کر بھی ملک کی آمدنی کا ایک اہم حصہ ہیں، اور جو براہ راست ٹیکس سے زیادہ ہے. حکومت کے ہی دستاویز بتاتے ہیں کہ کل ٹیکس کو دو تہائی حصہ بالواسطہ ٹیکس سے آتا ہے، جبکہ براہ راست ٹیکس کا حصہ ایک تہائی ہی ہے. لہذا یہ بات بھی درست نہیں لگتی، کر تو ہم دیتے ہیں. ٹھیک ہے کہ براہ راست نہیں دیتے.

جی ایس ٹی اور اس کے لیے بڑھائے جانے والے سروس ٹیکس کے دائرے کو تو آپ اڑا ہی گئے، ویسے. کیونکہ آگے الیکشن ہے اور ٹیکس کے سلسلے میں ایک بھی منفی لائن آپ سیاسی صحت کے لیے نقصان دہ ہو سکتی ہے. آپ کو یہ واضح کرنا تھا کہ اس سال جی ایس ٹی لاگو کیا ہی جانا ہے تو خدمت کر بھی آپ کو 18 فیصد تک کب لے جانے والے ہیں .

یہ کہنا درست نہیں لگتا کہ شہری ملک کے لئے اپنا کردار ادا نہیں دیتے. الزام تو یہ ہے کہ ملک کی انتظامات ہی اس ٹیکس سے ملک کی خدمت پورے ایمان سے نہیں کر پاتیں . تھوڑا سا طنز آپ نے ہم پر کر دیا، چلئے، تھوڑا سا ہم نے بھی آپ پر کر دیتے ہیں . بجٹ میں حساب برابر ہوا.

The short URL of the present article is: http://harpal.in/bTF3q

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے کھیتوں ک* نشان لگا دیا گیا ہے