Breaking News
Home / اہم ترین / . نہ پوچھ ان خرقہ پوشوں کی…تحریک اسلامی ہند بھٹکل کے خاموش خدمت گزار کے مختصر حالات زندگی

. نہ پوچھ ان خرقہ پوشوں کی…تحریک اسلامی ہند بھٹکل کے خاموش خدمت گزار کے مختصر حالات زندگی

تحریک اسلامی کا ایک روشن چراغ جناب شمش الدین اکرمی جنھوں نے بھٹکل میں تحریک اسلامی کا چراغ روشن کیا اور تیز جھکڑ ہواؤں میں بھی اس چراغ کو بجھنے نہ دیا اور اس فانوس کی حفاظت کرتے رہے آپ اتر کنڑا ضلع میں جماعت اسلامی کے اولین رکن ہیں آپ ایک خاموش لیکن ایک متحرک شخصیت رہے ہیں  نیلور آندھرا پردیش میں جماعت اسلامی سے تعارف ہوا مولانا عبد العزیز مرحوم نائب امیر جماعت اسلامی ہند رکنیت کے لئے ذریعہ بنے 1962 میں آپ جماعت کے رکن بن گئے کاروبار ماند پڑ جانے کی وجہ سے پھیری کے ذریعہ کپڑوں کی تجارت شروع کی آپ رزق حلال کے حصول کے خاطر اپنے کندھوں پر کپڑوں کا بنڈل اٹھائے شیموگہ اور اس کے اطراف کے گاؤں گاؤں کاچکر لگاتے تھے تیز دھوپ میں ریل کی پٹریوں پر پیدل چلتے  ہوئے اطراف واکناف کی آبادیوں میں جاتے تھے کپڑوں کے ساتھ ساتھ روح کی غذا کے لئے کنڑا کتابیں بھی ساتھ رہتی تھیں سفر دنیا میں زاد آخرت بھی پیش نظر تھا
آپ ایک  مست قلندر اور درویش صفت شخصیت ہیں   دنیا میں ہوں، دنیا کاطلبگار گار نہیں ہوں
بازار سے گزرا ہوں، خریدار نہیں ہوں
شمش الدین اکرمی صاحب کی خصوصیت یہ ہے کہ وہ کام کے دھنی ہیں انھوں نے زندگی بھر پھیری کر کے گزارہ کیا ڈاکٹر انور علی اور عمر حیات خان غوری سے خصوصی تعلق تھا  جماعت اسلامی کے آفس میں خود جھاڑو لگاتے اور وقت پر اس کو  کھولتے آپ جب تک ذمہ داری پر  فائز رہے ہفتہ واری پروگرام وقت پر ہی شروع ہوتے تھے گرچہ آپ تعلیم یافتہ نہیں تھے لیکن دوسروں سے برابر کام لیتے تھے اندرا گاندھی نے جب 1975 میں ملک میں ایمرجنسی نافذ کردی اور فیملی پلاننگ کو لازمی قرار دیا تھا جبری نس بندی کی جارہی تھی یہ ملک کی تاریخ کا ایک بدترین دور کہلاتا ہے جماعت اسلامی اور دیگر تنظیموں پر پابندی لگائی گئی تھی   ان کے رہنماؤں اور اراکین کو جیلوں میں ڈال دیا گیا جماعت نے الیکشن کے موقع پر کانگریس کی مخالفت کی اس لئے کہ جمہوریت کے بجائے ڈکٹیٹر شپ آرہی تھی چونکہ بھٹکل میں کانگریس پارٹی کی ٹکٹ پر قومی شخص کھڑا تھا آپ نے جماعت کے فیصلے کے مطابق کانگریس کی مخالفت میں تقریر کی اور جنتا دل جو اس وقت ایک طاقت بن کر پارٹی بن کر ابھری تھی اس کے حق میں تقریر کی بس پھر کیا تھا اس کی وجہ سے قومی سطح پر آپ کی بہت مخالفت ہوئی آپ کو غدار تک کہا گیا بازاروں میں گھومنا دشوار ہوگیا اس الیکشن میں ملکی سطح پر کانگریس کو بری طرح ہار ہوئی تھی
آپ سے کبھی  کسی کو شکایت پیدا نہیں ہوئی برماور سید حسن گورپا مرحوم شوکت مرحوم تینوں ساتھی تھے اور ان تینوں نے ویلفیئر سوسائٹی کی بنیاد رکھی تھی تینوں اکثر ساتھ رہتے تینوں مرد درویش صفت تھے

نہ پوچھ ان خرقہ پوشوں کی ارادت ہو تو دیکھ ان کو
ید بیضا لیے بیٹھے ہیں اپنی آستینوں میں
ترستی ہے نگاہِ نارسا جس کے نظارے کو
وہ رونق انجمن کی ہے انہیں خلوت گزینوں میں
سوسائٹی میں آپ کے ذمہ سونے کی جانچ تھی اور آپ نے اس میں کافی مہارت حاصل کی تھی سونے کو دیکھ کر ہی اس کے اصلی اور نقلی ہونے کو  پہچان لیتے تھے   آپ خود کندن ہیں  بلکہ کندن تحریک ہیں ابھی کچھ دنوں قبل اپنی خرابی صحت کے باوجود اسلامک ویلفیئر سوسائٹی تشریف لائے تھے آپ کو وھیل چیر پر سوسائٹی میں لایا گیا آپ کی تشریف آوری سے دور ماضی یاد آگیا کہ کس خستہ بلڈنگ میں غیر سودی سوسائٹی کا اجراء عمل میں آیا آج سوسائٹی کے شاندار آفس کو اپنی آنکھوں سے دیکھ رہے تھے سوسائٹی کو دیکھ کر آپ کی آنکھیں ٹھنڈی ہوگئیں جو پودا لگایا گیا تھا اب وہ تناور شجر بن چکا ہے   سوسائٹی کے موجودہ سکریٹری جناب قادر میراں پٹیل صاحب نے آپ کی اس امانت کو بڑی خوبصورتی اور امانت داری کے ساتھ سنبھال کر رکھا ہے اللہ ان سب سوسائٹی کے خادموں کو جزائے خیر عطا فرمائے
آپ نے اپنی اہلیہ کی وفات کے بعد دوسری شادی کی اس سے آپ کو دو اولاد پیدا ہوئی
آپ نے ایک مرتبہ مجھ سے کہا ہماری قوم ایک تجارت پیشہ اور بزنس مین قوم ہے دنیا بھر کے حالات سے واقفیت رکھتی ہے یہ کوئی جاہل ان پڑھ قوم نہیں ہے ہماری قوم اگر حقیقی معنی میں غور و فکر کرتی تحریک اسلامی ہی اس قوم کے لئے موزوں ترین ہو سکتی تھی لیکن صحیح طور پر جماعت اسلامی کا تعارف ان کے سامنے پیش نہیں ہوا
آپ نے اپنی اہلیہ کے انتقال کے بعد 1973 میں دوسری شادی کی اس پیرانہ سالی میں آپ پھر صاحب اولاد ہوگئے آپ کو  پہلی بیوی سے چار اولاد ہوئی تین بیٹے اور ایک بیٹی ہے جب کہ دوسری بیوی سے ایک بیٹا اور ایک بیٹی پیدا ہوئی دونوں بچے جوانی کی دہلیز پر قدم رکھ رہے ہیں دونوں بیویوں کی اولاد سے تعلق سے احسن طریقے سے تعلق نبھایا کبھی شکایت کا موقع آنے نہیں دیا
آپ کافی معمر ہو چکے ہیں 92 سال ہیں ان کے فرزند سیف الدین اکرمی نے بتایا اس پیرانہ سالی میں بھی رمضان المبارک کے مکمل تیس روزے رکھے ہیں

اللہ سے دعا ہے کہ اس مرد درویش کی خدمات قبول

ابو یوسف دعوت سینٹر

The short URL of the present article is: http://harpal.in/EtgVg

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے کھیتوں ک* نشان لگا دیا گیا ہے