Breaking News
Home / اہم ترین / جمعیت الحفاظ کی جانب سے دو روزہ مسابقہ حفظ کا شاندار آغاز اور روح پرور اختتام ۔ قرآن سے جڑے رہنے اور اس کو مشعل راہ بنانے علماء کی اپیل

جمعیت الحفاظ کی جانب سے دو روزہ مسابقہ حفظ کا شاندار آغاز اور روح پرور اختتام ۔ قرآن سے جڑے رہنے اور اس کو مشعل راہ بنانے علماء کی اپیل

بھٹکل (ہرپل نیوز) یکم اپریل:بھٹکل میں جمعیۃ الحفاظ کی جانب سے منعقد مسابقہ قرآن کا کل رات روح پرور اختتام ہوا ۔ اختتام کے موقع پر ملک اور بیرون ملک کے مختلف علمائے کرام نے قرآن کی عظمت اور اور حفاظ کے مرتبہ پر اپنے خیالات کا اظہار کیا ۔ مقررین نے جمعیت الحفاظ کی جانب سے کئے گئے انتظامات اور طلبہ کے حفظ کی پختگی پر خوشی کا اظہار کرتے ہوئے نیک خواہشات کا اظہار کیا ۔ اس موقع پر مسابقہ میں بہترین پرفامینس کرنے والے حفاظ کو بیش قیمت انعامات سے نوازا گیا۔مسابقہ قرآن میں حکم کے فرائض انجام دینے والے قاری مفتی وسیم نے میڈیا کے ساتھ بات چیت میں پروگرام کی کامیابی اور جمعیت کی جانب سے حفاظ کے انتخاب پر خوشی کا اظہار کرتے ہوئے حفظ قرآن کے لئے بھٹکل کو مثالی بستی قرار دیا ۔ انہوں نے اس مثالی بستی کے اچھے اثرات عام کرنے کی خواہش کا اظہار کیا ۔

جمعرات  کی شام کو  اس مسابقہ کا افتتاح ہوا تھا  جس کے لئےلکھنو سے مولانا زکریا سنبھلی ندوی اور متحدہ عرب امارات سے عبد الرحیم سلطان العلماء السید احمد نورائی بطور خاص موجود تھے ۔ افتتاحی اجلاس سے خطاب کرتےہوئے اجلاس کے کنوینر  مولانا عبد العلیم  خطیب ندوی نے کہا کہ قرآن کو یاد کرنا جتنا اہم ہے اس سے زیادہ اہم یہ ہے کہ اس حفظ کو مستحکم کیا جا ئے ۔ اس کے لئے بھٹکل میں  گزشتہ پاچ چھ سال قبل جمعیۃ الحفاظ کا قیام عمل میں آیا   تھا جس کے ذریعہ بھٹکل کے حفا ظ کویہ ذریں موقع فراہم کیا گیا کہ وہ اس سے جڑ کر اپنے  حفظ کو مستحکم کریں ۔اس بیچ جمعیت کے جنرل سکریٹری  مولانا عرفان ایس ایم ندوی نے  دو روزہ پروگرام کی تفصیلات میڈیا سے  بیان کیں۔  انہوں نے کہا کہ دو روزہ پروگرام میں بھٹکل کے کم و بیش چالیس حفاظ شرکت کریں گے ۔ انہوں نے کہا کہ ان چالیس حفاظ کو چار زمروں میں تقسیم کیا گیا ہے۔

 اختتامی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے متحدہ عرب امارات سے تشریف لائے عبد الرحیم سلطان العلماءنے یہاں کے بچوں کی تلاوت کے طرز کی جم کر تعریف کی انہوں نے کہا کہ بسا اوقات اہل عرب کی تلاوت سے بھی اچھی تلاوت یہاںسنی گئی ۔  دارالعلوم ندوۃ العلماء کے شیخ الحدیث  مولانا زکریا سنبھلی ندوی نے  حفاظ کو مبارکباد دیتے ہوئے  ان کی سراہنا کی ۔ انہوں نےکہا کہ عمر کے کسی بھی پڑاؤ میںقرآن یاد کیا جا سکتا ہے لھذا ہر کوئی یہ سعادت حاصل کرنے کی کوشش کرے ۔ اسی طرح مولانا الیاس ندوی ، مولانا سید ہاشم نظام ندوی، مولانا عبد المتین منیری، اور صدر جمیت الحفاظ مولانا نعمت اللہ عسکری ندوی نے بھی موقع کی مناسبت سے اپنے خیالات کا ظہار کیا ۔

 اجلاس کے اختتامی سیشن میں بھٹکل جماعت المسلمین کے  نائب قاضی مولانا  عبد الرب ندوی، قاضی مرکزی خلیفہ جماعت المسلمین مولانا خواجہ معین الدین اکرمی مدنی، ناظم جامعہ  ماسٹر محمد شفیع شاہ  بندری، مہتمم جامعہ اسلامیہ مولانا مقبول کوبٹے ندوی، ممتاز عالم دین مولانا الیاس ندوی، مشہور مقامی مؤرخ مولانا عبد المتین منیری ، معروف عالم دین مولانا سید ہاشم نظام ایس ایم ندوی سمیت کافی  ذمہ داران اسٹیج پر تشریف فرما تھے۔

پروگرام میں امتیازی نمبرات سے کامیاب  ہونے والے درج ذیل ہیں

زمرہ نمبر۱:

اول:    حافظ احمد ابن عبدالواجد کولا

دوم:     حافظ عبدالمقسط ابن ابرہیم خلیل کھومی

سوم:     حافظ محمد ریان ابن رفیق حسن باپا

زمرہ نمبر ۲:

اول:    حافظ سید نبیغ ابن سید نوالہدیٰ برماور

دوم:     حافظ محمد نبراس ابن نثار احمد جمعدار

سوم:     حافظ سفیان ابن محمد سراج عجائب

زمر ہ نمبر۳:

اول:    حافظ محمد عمیر ابن عرفان گولٹے

دوم:     حافظ جعفر زیان ابن محمد زکریا شریف

سوم:     حافط عبدالرحمٰن ابن مشتاق احمد رکن الدین

زمرہ نمبر۴:

اول:    حافظ محمد عمرو ابن مولانا جیلانی  اکرمی ندوی

دوم:     حافظ عبدالمقیت ابن مشتاق صاحب کے ایم

سوم:     حافظ محمد امین زھیب ابن ضیاء الدین دامدا ابو

ہرپل آن لائن تمام کامیاب طلبہ اور سعادت مند حفاظ کی خدمت میں ڈھیر ساری مبارکباد پیش کرتے ہوئے ان کے حق میں نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہے ۔ اس سلسلے میں ای ٹی وی اردو پر نشر ایک رپورٹ دیکھنے کے لئے یہاں کلک کریں

The short URL of the present article is: http://harpal.in/9nMWJ

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے کھیتوں ک* نشان لگا دیا گیا ہے