Breaking News
Home / تازہ ترین / جنسی اسکینڈل کامعاملہ کرناٹک کے وزیرایکسائزایچ آئی میٹی مستعفی

جنسی اسکینڈل کامعاملہ کرناٹک کے وزیرایکسائزایچ آئی میٹی مستعفی

بنگلور(ہرپل نیوز)15/دسمبر ریاستی وزیر آبکاری ایچ وائی میٹی جو مبینہ جنسی اسکنڈل میں پکڑے گئے تھے، نے آج وزیراعلیٰ سد رامیا کو ان کی سرکاری قیام گاہ کرشناپہنچ کر استعفیٰ دے دیا۔مسٹرسدارمیا نے مکتوب استعفیٰ وصول کرنے کے بعد ٹوئٹ کرتے ہوئے کہا کہ انہو ں نے اس استعفیٰ کو قبول کرلیا ہے اور اسے منظوری کیلئے گورنر واجو بھائی والا کو بھیج دیا گیا ہے۔سدرامیا نے اپنے ٹوئٹ میں کہا'میں نے استعفیٰ قبول کرلیا ہے اور گورنر سے سفارش کی ہے کہ اسے قبول کیا جائے۔ ساتھ ہی میں نے اس مسئلہ کی جانچ کے بھی احکام دئے ہیں۔آرٹی آئی کے ایک جہد کار راج شیکھر نے نئی دہلی میں میڈیا کو بتایا کہ گذشتہ ایک ماہ سے وہ میٹی کے مبینہ طور پر جنسی اسکینڈ ل میں ملوث ہونے کا الزام لگارہے ہیں اور جب وہ شکایت درج کروانے گئے تو انہیں دھمکی دی گئی۔سرکاری دفتر میں جنسی عمل میں مبینہ طور پر میٹی کے ملوث ہونے کا الزام لگایا گیا تھا اور انہوں نے عوام کے سامنے جانے کے خلاف خاتون کو دھمکی دی تھی۔سابق وزیراعلیٰ و جے ڈی ایس کے ریاستی صدر ایچ ڈی کمار سوامی نے کہا کہ حکومت میں ایسے وزیر کا ہونا حکمراں جماعت کیلئے شرم کی بات ہے۔انہو ں نے کہاکہ یہ مسئلہ نیانہیں ہے۔ یہ ایک ماہ پرانی کہانی ہے اور سدرامیا اس سے بخوبی واقف تھے۔ یہاں تک کہ وزیر داخلہ پرمیشور اور ان کے مشیر کیمپیا نے اس مسئلہ کو ختم کرنے کی کوشش کی،لیکن حقیقت آج سامنے آگئی۔مقامی چینل پر دکھائی گئی۔ سی ڈی پر میٹی نے گذشتہ تین دن سے اس واقعہ میں ملوث ہونے کی تردید کی اور آج انہوں نے وزیراعلی سے ملاقات کرتے ہوئے استعفیٰ دے دیا۔گذشتہ روز میٹی نے وزیراعلیٰ اور پرمیشور سے ملاقات کی تھی۔ وہ کرناٹک پردیش کانگریس کمیٹی کے صدر ہیں۔ اس ملاقات کے دوران انہوں نے اس معاملہ میں ملوث ہونے کی تردید کی تھی۔میٹی نے کہا کہ انہوں نے اخلاقی بنیاد پر استعفیٰ دیا ہے اورسدارامیا سے اپیل کی ہے کہ وہ اس معاملہ کی جانچ کروائیں۔ انہوں نے کہا " میں ایسے عمل میں ملوث نہیں ہوں۔ میرے خلاف جو بھی الزامات لگائے گئے وہ حقیقت سے بعید ہیں اور جانچ میں حقائق سامنے آجائیں گے۔ آرٹی آئی جہدکارراج شیکھر نے کہا کہ انہوں نے اے آئی سی سی سربراہ سونیاگاندھی سے ملاقات کا وقت مانگا اور وہ کرناٹک میں سدارامیا حکومت کی کارکردگی سے انہیں واقف کروائیں گے۔انہو ں نے کہا " مجھے اس وقت سے مختلف طریقوں سے دھمکیاں دی جارہی ہیں جب سے میں نے رشوت کے خاتمہ کا مطالبہ کیا اور اس سمت کام کیا۔ میں آگے بڑھ رہا ہوں اور ریاستی حکومت کی آنکھیں کھولنے کیلئے یہ ایک صرف چھوٹا سا قدم ہے۔

The short URL of the present article is: http://harpal.in/ppSMN

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے کھیتوں ک* نشان لگا دیا گیا ہے