Breaking News
Home / اہم ترین / خشک سالی کا مسئلہ نے دیہی ترقیات اور پنچایت راج کے وزیر مسٹر کے ایچ کے پاٹل کے آبائی ضلع گدگ میں بھیانک شکل اختیار کرلیا ہے

خشک سالی کا مسئلہ نے دیہی ترقیات اور پنچایت راج کے وزیر مسٹر کے ایچ کے پاٹل کے آبائی ضلع گدگ میں بھیانک شکل اختیار کرلیا ہے

بیدر(ہرپل نیوز،محمد امین نواز)۔۔5؍مارچ:۔خشک سالی کا مسئلہ نے دیہی ترقیات اور پنچایت راج کے وزیر مسٹر کے ایچ کے پاٹل کے آبائی ضلع گدگ میں بھیانک شکل اختیار کرلیا ہے۔گدگ ضلع کے کئی دیہات کے لوگوں کو ایک گھڑا پانی کیلئے دو تین کلو میٹر تک کا فاصلہ طے کرنا پڑرہا ہے۔آبپاشی کے فقدان میں زراعت کلچر متاثر ہوگئی ہے۔ کام نہیں ہونے سے سینکڑوں زراعت مزدور روزگار کی تلاش میں گوا اور مہاراشٹرا کے شہروں کی جانب نقل مکانی کررہے ہیں۔چارہ ‘پانی کی غیر موجودگی میں مویشی تڑپ رہے ہیں۔ضلع کے مڈرگی‘نرگونڈ تحصیل کو چھوڑ کر گدگ ‘رینا‘شرہٹی‘تحصیلوں میں آبپاشی منصوبے نہیں ہونے سے حالات زیادہ سنگین ہیں۔ مڈرگی تحصیل سے تنگبھدرا دندی نکلتی ہے ‘لیکن گرمیوں کے آغاز میں ہی ندی سوکھ گئی ہے۔نرگد تحصیل میں ملپربھا ندی بہتی ہے ‘لیکن اس ندی میں بھی پانی کم ہورہا ہے۔تنگبھدرا اور ملپربھا ندیا ں خشک ہوجانے کے باعث آبپاشی کیلئے کنوئیں کاغیر ضابطہ استحصال کیا جارہا ۔نتیجے میں ضلع میں زمینی سطح میں مسلسل کمی ہورہی ہے۔ انتظامی ذرائع کے مطابق ضلع گدگ میں2471ٹیوب ویل ہیں ۔زمینی سطح کم ہونے سے اب700-800فٹ کھدائی کے بعد بھی ٹیوب ویلوں میں پانی کے ذخیرے ‘زرعی اراضی میں آبی ذخائر کی تعمیری جیسی اہم منصوبہ بندی سے کوئی فائدہ نظر نہیں آتا ہے ۔اس سال جنوری سے ہی کئی دیہات میں ٹینکروں سے پانی فراہم کیا جارہا ہے۔گدگ ضلع مجسٹریٹ منوج جین کے مطابق ضلع میں خشک سالی امداد ی کام کی نگرانی کیلئے ایک خصوصی نوڈل آفیسر مقرر کیا گیا ہے۔ اس افسر کے ذریعے ضلع انتظامیہ صورتحال پر مسلسل نگرانی کررہا ہے۔ ضلع میں پینے کے پانی کو ترجیح دی جارہی ‘مویشیوں کیلئے چارے کا ذخیرہ کیا جارہا ہے۔

The short URL of the present article is: http://harpal.in/dc6so

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے کھیتوں ک* نشان لگا دیا گیا ہے