Breaking News
Home / اہم ترین / دہلی میں فضائی آلودگی انتہائی عروج پر۔ایمس نے جتائی تشویش ۔بڑھتی آلودگی سے سانس لینے میں مصیبت۔ تعمیراتی سرگرمیوں پرروک۔اگلے پانچ دنوں تک گیس چمیبربنی رہے گی دہلی،اتوار تک تمام اسکول بند

دہلی میں فضائی آلودگی انتہائی عروج پر۔ایمس نے جتائی تشویش ۔بڑھتی آلودگی سے سانس لینے میں مصیبت۔ تعمیراتی سرگرمیوں پرروک۔اگلے پانچ دنوں تک گیس چمیبربنی رہے گی دہلی،اتوار تک تمام اسکول بند

نئی دہلی (ہرپل نیوز، ایجنسی)9نومبر۔ آل انڈیا انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنسز (ایمس) نے دہلی میں فضائی آلودگی سے پیدا ہوئے حالات کو ’طبی ہنگامی صورتحال‘ قرار دیا ہے۔ ایمس کے ڈائرکٹر ڈاکٹر رندیپ گلیریا نے یہاں نامہ نگاروں سے کہا کہ اس موسم میں ادارہ کے او پی ڈی اور آئی سی یو میں مریضوں کی تعداد بیس فیصد بڑھ گئی ہے۔ جن لوگوں کو سانس اور دل کی بیماری ہے وہ اس موسم میں سب سے زیادہ متاثر ہیں۔ بچوں کو اس کی وجہ سے پھیپھڑوں اور دیگر طرح کے مسائل پیدا ہوسکتے ہیں جو ان کے لئے خطرناک ہوسکتے ہیں۔دہلی کی فضائی آلودگی کو آہستہ آہستہ جان لیوا قرار دیتے ہوئے کہاکہ اس موسم میں ہوا میں سلفر اور نائٹروجن آکسائڈ بڑھ جاتی ہے جس سے سانس لینے میں تکلیف ہوتی ہے۔ ڈاکٹر گلیریا نے کہا کہ زیادہ عمر کے لوگوں اور بچوں کے لئے یہ موسم مناسب نہیں ہے اور انہیں اپنے گھروں میں ہی رہنا چاہئے۔ اس دوران کسرت، گھومنا پھرنا، سائکل چلانا، جوگنگ جیسی سرگرمیاں نہیں کی جانی چاہئیں اور بچوں کو گھر سے کھیلنے کیلئے نہیں نکلنا چاہئے۔ انہوں نے اس دوران وٹامن سی اور زیادہ تر پانی اور پینے کی چیزوں جیسے جوس وغیرہ کا استعمال کرنے کا مشورہ دیا۔

دارالحکومت میں ہوا کا معیار اتنا خراب ہو گیا ہے کہ یہاں سانس لینا روزانہ 50 سیگریٹ پینے جیسا ہے۔یہاں ہوا کے معیار کا انڈیکس 451 تک پہنچ گیا ہے جبکہ اس کی مزید سطح 500 ہے۔جو کہ بیمار لوگوں کے علاوہ، صحت مند افراد کے لئےبھی نقصان دہ ہیں۔

دھند سے دہلی- این سی آر میں بڑھی آلودگی، سانس لینے میں مصیبت: دلی – این سی آر کی آب وہوا ایک بار پھر خراب ہو گئی ہے۔ ہوا کی کیفیت ایک نازک مرحلے تک پہنچ گئی ہے۔ دھند اتنی شدید ہے کہ وزیبلٹی بھی کم ہو گئی ہے اور اوپر سے آلودگی کے مد نظرسانس لینے میں بھی پریشانی ہو رہی ہے۔تاہم، مرکزی آلودگی کنٹرول بورڈ (سی پی سی بی) کا کہنا ہے کہ اس کا بنیادی سبب پنجاب اور ہریانہ سے آنے والی ہوائیں ہیں جس کی وجہ سے شہر کی آب و ہوا خراب ہو رہی ہے۔بورڈ کے مطابق، ابھی یہ صورت حال کچھ دنوں تک بنی رہے گی۔ خاص بات یہ ہے کہ آلودہ ہوا کی وجہ سے لوگوں کو سانس لینے میں پریشانی ہو رہی ہے۔ کچھ لوگ آنکھوں میں جلن کی بھی شکایت کر رہے ہیں۔بڑھتی آبادی، گاڑی اور انتظامی غفلت کی وجہ سے آلودگی کی سطح بھی خراب ہو گئی ہے۔ مرکزی آلودگی کنٹرول بورڈ کے مطابق جانیے کل دوپہر 12:30 تک دہلی۔ این سی آر میں کون سی وہ 5 جگہیں رہیں، جہاں پی ایم 2.5 کی سطح سب سے اوپر تھی۔ جو کسی بھی صحت مند شخص کو بیمار بنانے کے لئے کافی ہے۔مرکزی آلودگی کنٹرول بورڈ کے مطابق، دہلی۔ این سی آر میں کل دوپہر تک سب سے زیادہ آلودگی غازی آباد کے وسندھرا میں تھی۔

دہلی میں دم گھٹنے والی والی آلودگی: تعمیراتی سرگرمیوں پر روک، ٹرک چلنا بھی محدود: راجدھانی اور آس پاس کے علاقوں میں دم گھونٹ دینے والی آلودگی سے نپٹنے کے لئے لیفٹننٹ گورنر انل بیجل کے ساتھ وزیراعلی اروند کیجریوال اور دیگر سینئر حکام کی اعلی سطحی میٹنگ میں آج کئی اہم فیصلے کئے گئے۔ ان میں دہلی میں سبھی طرح کی تعمیراتی سرگرمیوں پر فوری طورپر روک لگانے کے ساتھ ساتھ لازمی اشیا کو لانے والے ٹرکوں کو چھوڑ کر دیگر ٹرکوں کے چلنے پر پابندی لگا دی گئی ہے۔راج نواس میں آج ہوئی اس میٹنگ کے بعد مسٹر بیجل نے ٹوئٹ کرکے فیصلوں کی اطلاع دی ۔ اس سے پہلے حکومت نے تمام اسکولوں اور کلاسوں کو اتوار تک بند کرنے کا اعلان کیا تھا۔ آلودگی کم کرنے کے مقصد سے سڑکوں پر کم نجی گاڑیاں آئیں پارکنگ فیس بڑھانے کی ہدایت دی گئی ہے۔ دہلی میٹرو کو زیادہ پھیرے اور دہلی ٹرانسپورٹ کارپوریشن کو زیادہ سے زیادہ بسیں سڑکوں پر اتارنے کے لئے کہا گیا ہے۔دھوئیں کی وجہ سے قومی راجدھانی علاقہ میں لوگوں کو سانس لینا مشکل ہوگیا ہے۔ سڑکوں پر لوگ ماسک لگا کر نکل رہے ہیں۔ دہلی پولیس کے ٹریفک کنٹرول محکمہ کے اہلکار ماسک لگاکر اپنی ڈیوٹی کرتے نظر آرہے ہیں۔ عالمی صحت تنظیم کے پیمانوں کے مقابلہ دہلی میں آلودگی چالیس گنا زیادہ ہے۔ ڈاکٹر اور طبی اداروں نے آلودگی کی وجہ سے ’طبی ہنگامی صورتحال‘ کا اعلان کیا ہے ۔ محکمہ موسمیات کے مطابق ابھی کم از کم پانچ دن یہ دور جاری رہنے کا اندازہ ہے۔ ڈاکٹروں نے دھوئیں کی وجہ سے صبح کی سیرسے لوگوں کو بچنے کا مشورہ دیا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ استھما کے مریضوں کے لئے یہ صورتحال نہایت خطرناک ہے۔ اس کی وجہ سے دماغ، دل اور پھیپھڑوں کو بھی نقصان پہنچ سکتا ہے۔پنجاب اور ہریانہ میں دھان کی پرالی جلائے جانے کی وجہ سے خاص طورپر دہلی میں آلودگی زہریلی سطح سے بھی اوپر نکل گئی ہے۔ کل سے ہی دہلی دھوئیں کی پرت کے نیچے ڈھکی ہوئی ہے جس سے بارش یا تیز ہوائیں چلنے پر ہی نجات مل سکتی ہے۔عالمی صحت تنظیم کے پیمانوں کے مطابق راجدھانی میں پی ایم۔25کی سطح چالیس گنا زیادہ ہے۔

پانچ دنوں تک گیس چمیبر بنی رہے گی دہلی،اتوار تک تمام اسکول بند: دہلی این سی آر میں خطرناک زہریلی آلودگی کم ہونے کے بجائے مسلسل بڑھتی جارہی ہے ،موسم محکمہ کا مانناہے کہ پانچ دنوں تک دہلی کی آلودگی میں کوئی کمی واقع نہیں ہوگی اور اسی طرح دہلی گیس چیمبر بنی رہے گی ،ڈبلیو ایچ او کی حد 40 فیصد زیادہ دہلی کی فضاءزہریلی ہوچکی ہے ،دہلی حکومت نے اتوار تک تمام پرائمری اسکولوں کو بندرکھنے کا حکم جاری کردیاہے۔دوسری جانب ڈاکٹروں اور میڈیکل اداروں نے دہلی این سی آر میں ہیلتھ ایمرجنسی نافذکردی ہے۔

The short URL of the present article is: http://harpal.in/AlZfj

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے کھیتوں ک* نشان لگا دیا گیا ہے