Breaking News
Home / اہم ترین / سپریم کورٹ میں ہائی وولٹیج ڈرامہ ، جسٹس كاٹجو کو توہین عدالت کا نوٹس

سپریم کورٹ میں ہائی وولٹیج ڈرامہ ، جسٹس كاٹجو کو توہین عدالت کا نوٹس

نئی دہلی: (ہرپل نیوز /ایجنسی12 نومبر) سپریم کورٹ میں آج اس وقت ہائي وولٹیج ڈرامہ دیکھنے کو ملا جب اس نے کیرالہ کےسومیا عصمت دری اور قتل کیس میں اپنے ہی سابق جج مارکنڈے كاٹجو کو توہین عدالت کا نوٹس جاری کیا۔ عدالت عظمی کے فیصلے پر تنقید کے لئے جسٹس كاٹجو کو عدالت میں طلب کیا گیا تھا۔ جسٹس كاٹجو آج جسٹس رنجن گوگوئی، جسٹس پرفل چند پنت اور جسٹس ادےامیش للت کے خصوصی بنچ کے سامنے پیش ہوئے۔

عدالت نے کہا کہ سومیا عصمت دری اور قتل کیس میں سابق جج نے فیصلے پر تنقید نہیں کی بلکہ ججوں پر تنقید کی ہے۔ اسی دوران جسٹس كاٹجو نے برہمی سے کہاکہ مسٹر (جسٹس) گگوئی مجھے دھمکی مت دیجئے۔ آپ کو جو کرنا ہے کیجئے، میں ڈرتا نہیں ہوں۔ عدالت کے کمرے میں سابق جج نے جسٹس گگوئی کو مسٹر گوگوئی کہہ کر کئی بار پکارا۔ انہوں نے یہ بھی یا د دلایا کہ وہ (جسٹس گگوئی) سپریم کورٹ میں ان سے جونیئر جج رہے ہیں۔

جسٹس کاٹجو کے تبصرے پر جسٹس گگوئی ناراض ہو گئے اور انہوں نے جسٹس كاٹجو کو عدالت سے باہر لے جانے کے لئےسکیورٹی گارڈ کو بلایا۔جسٹس گگوئی نے کہاکہ کوئی باہر ہے جو جسٹس كاٹجو کو عدالت کے کمرے سے باہر لے جائے۔ اس کے بعد جسٹس كاٹجو غصے میں عدالت کے کمرے سے باہر آ گئے۔

خیال رہے کہ آج پہلی بار کوئی سبکدوش جج کسی معاملے میں بحث کرنے آیا۔ جسٹس کاٹجو عدالت کا سمن ملنے کے بعد اپنا موقف رکھنے کے لئے عدالت کے کمرہ نمبر نمبر 6 میں حاضر ہوئے تھے۔

یہ وہی عدالتی پینل ہے جہاں جسٹس كاٹجو ریٹائرڈ ہونے کے وقت آخری بار جج تھے۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ جسٹس كاٹجو اور موجودہ جسٹس للت کی حیثیت عین برعکس تھی۔ کبھی جسٹس للت جسٹس كاٹجو کی عدالت میں اپنے کیس کی پیروی کرتے تھے اور آج جسٹس كاٹجو سومیا قتل کیس میں جسٹس للت کی عدالت میں اپنا موقف رکھنے آئے تھے۔ اس معاملے میں جسٹس كاٹجو نے عدالت سے اپنا موقف رکھنے کے لئے ایک گھنٹے کا وقت مانگا تھا۔ واضح رہے کہ سابق جج نے بلاگ لکھ کر سومیا قتل کسی میں عدالت عظمی کے فیصلے پر تنقید کی تھی۔

The short URL of the present article is: http://harpal.in/HWXHr

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے کھیتوں ک* نشان لگا دیا گیا ہے