رويش کمار(مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔)

میڈیا کے ذریعہ آپ کے ساتھ ایک کھیل کھیلا جا رہا ہے. کسی شخص کی سیاسی امنگوں کے لئے بہت سارے لوگ راشٹرواد کے گئو رکشا میں لگا دئیے گئے ہیں۔ گجرات کے دلتوں نے گئو رکشا کا علاج کر دیا تو اب گئو رکشکوں نے راشٹرواد کو گائے بتا کر ہنگامہ مچانا شروع کر دیا ہے. عام عوام کو یہ بات دیر سے سمجھ میں آئے گی لیکن اس وقت تک وہ سیاسی خیموں کی زنجیروں میں اس قدر جکڑ دیئے جائیں گے کہ نکلنا مشکل ہو جائے گا. شكنجوں کے زور سے ان کے پاؤں لہولہان ہوں گے مگر وہ آزاد نہیں ہو پائیں گے.

اس دور میں فرقہ واریت الگ الگ برانڈ کی شکل میں آ رہی ہے. لو جہاد، آبادی کا خوف، گئو مانس، مذہبی پرچم کو پاکستانی بتانا، پلاین، گئو رکشا. یہ سب اس برانڈ کے الگ الگ ورژن ہیں. جیسے ٹوتھ پیسٹ کے الگ الگ برانڈ ہو سکتے ہیں. پتانجلی، کولگیٹ، مسواك، پیپسوڈینٹ ٹوتھپیسٹ ہیں فرقہ واریت. اسے بنانے والا کوئی کارپوریشن بھی ہوگا. اس کارپوریشن کا نام ہے راشٹرواد. یہ الگ الگ نام سے اسی ایک ٹوتھ پیسٹ کو بیچ رہا ہے. گئو رکشا تو کبھی راشٹرواد.اب اسے فروخت کرنے کے لئے اس کو پارچون اسٹور بھی چاہیے اور سپر مال بھی. جس کا نام ہے میڈیا. جب وہ ٹوتھ پیسٹ برانڈ الگ الگ لانچ کر سکتا ہے تو میڈیا کا بھی لانچ کر سکتا ہے. وہاں بھی آقا ایک ہی ہے مگر ان کے چینل بہت سے ہیں. اب ہو یہ رہا ہے کہ میڈيا کی دکان میں راشٹرواد فروخت کرنے کے لئے راشٹرواد کا غلاف چڑھایا جا رہا ہے. اتنے سارے ٹوتھ پیسٹ ہیں، کوئی کون سا والا خريدے گا، اس کا بھی علاج ہے. ایک ہی بات کہنے والے بھانت بھانت کے اینکر یا بھانت بھانت کے اینكروں کو ایک ہی بات کہنے کی تربیت.

آپ کبھی تو سوچئے کہ میڈیا راشٹرواد  کو لے کر اتنا پرجوش کیوں ہو رہا ہے؟ کیوں ہر بار فوج اور سرحد کے نام پر اس راشٹرواد کو ابھارا جاتا ہے؟ کیوں جب یہ ٹھنڈا پڑتا ہے تو گئورکشا آ جاتا ہے؟ گئو رکشا پٹ جاتا ہے تو راشٹرواد آ جاتا ہے؟ اس لڑائی کو آپ بھلے ہی چند اینكروں کے مابین کا معاملہ سمجھیں لیکن ایسا ہے نہیں. کوئی ہے جو یہ کھیل کھیل رہا ہے. کوئی ہے جس کے سیاسی امنگوں کے لئے یہ کھیل کھیلا جا رہا ہے۔ اس کا چہرہ آپ کبھی نہیں دیکھ پائیں گے کیونکہ مہا كارپوریشن کس کے اشارے پر چلتا ہے، اس کا چہرہ کوئی نہیں دیکھ پاتا ہے. صرف لوگ گنے جاتے ہیں اور لاشیں دفن کی جاتی ہیں. پوری دنیا میں ایسا ہی چلن ہے.

راشٹرواد جن میں بھرپور ہے یعنی جن کے ٹیوب میں پیسٹ بھرا ہے انہوں نے کیا کر لیا؟ اس کا ایک سب سے بڑا ابھیان لانچ ہوا تھا جو آج بھی لانچ کی حالت میں ہی ہے. سوچھ بھارت ابھیان. دو سال پہلے بہت سے رہنما، کارکن، اداکار جھاڑو لے کر خوب ٹویٹ کرتے تھے. ٹوئٹر کے نو رتن تعینات کرتے تھے کہ یہ بھی صفائی کریں گے تبھی دیش صاف ہوگا. کہا گیا کہ اکیلے حکومت سے کچھ نہیں ہوگا. سب کو آگے آنا ہوگا. آج وہ لوگ کہاں ہیں؟ ٹوئٹر کے  نو رتن کہاں ہیں؟ صفائی مہم کہاں ہے؟ وہ راشٹروادی جذبہ کہاں ہے جسے لے کر یہ لوگ چرن امرت چھڑک رہے تھے کہ اب ہم صاف ستھرے ہونے والے ہیں. جو لوگ آئے تھے ان کا راشٹرواد کیوں ٹھنڈا پڑ گیا؟ دو سال میں تو وہ اپنی پوری کالونی صاف کر دیتے. کیا انہوں نے ان اینكروں کو دیکھنا چھوڑ دیا جنہیں راشٹرواد کا ٹول ٹیکس وصول کرنے کا کام دیا گیا ہے؟

سوچھ بھارت ابھیان کے تحت نئی دہلی کے بالميکی مندر کے پاس انوکھا ٹوائلٹ بنا. کیا دہلی میں ویسا ٹوائلٹ اور بھی کہیں رکھا گیا؟ ایسا ہے تو دو سال میں دہلی میں کم از کم سو پچاس ایسے ٹوائلٹ تو رکھے ہی گئے ہوں گے؟ کیا آپ کو نظر آتے ہیں؟ کیا آپ کو دہلی کے محلوں میں یا اپنے کسی شہر میں ایسے ٹوائلٹ، کوڑے دان نظر آتے ہیں جو اس ابھیان کے تحت رکھے گئے ہوں؟ ان کی صفائی ہوتی ہے؟ ایک یا دو کوڑے دان رکھ  کرخانہ پری کی بات نہیں کر رہا. اگر کہیں یہ کامیاب بھی ہوگا تو ان ہی انتظامات کے درست ہونے کی وجہ سے نہ کہ ٹوئٹر کے چھائے گالی غنڈوں کے راشٹرواد سے.

اس کہانی کا مطلب یہ ہوا کہ آپ کے مسئلہ کی وجہ راشٹرواد میں کمی نہیں ہے. سوچھ ابھیان اس لئے ناکام ہوا کیونکہ دہلی کو صاف کرنے کے لئے کئی ہزار صفائی ملازموں کی ضرورت تھی. کیا بھرتی ہوئی؟ جو موجودہ ملازمین ہیں ان کی تنخواہ نہ ملنے کی خبریں آتی رہتی ہیں. انہوں نے اپنی سیلری کے لئے دہلی کی سڑکوں پر کچڑا تک پھینک دیا. اب آپ  اس طرح کے سوال نہ پوچھ بیٹھیں اس لئے آپ کا انتظام کیا گیا ہے. مسلسل ایسے معاملے پیش کئے جا رہے ہیں جن کا تعلق کبھی براہ راست فرقہ واریت سے ہو یا راشٹرواد سے، یہ اس لئے ہو رہا ہے کہ آپ  ہمیشہ غیر حقیقی دنیا میں رہنے لگیں، ویسے رہتے بھی ہیں. کوئی ہے جو آپ کو خوب سمجھ رہا ہے. یہی کہ آپ سر نیچا کئے  اسمارٹ فون پر بزی ہیں. ان ہی اسمارٹ فون پر ایک کھیل آ گیا ہے. پوكیمون. کھیلتے کھیلتے اسی بہانے اپنے محلے میں صفائی تلاش کر آیئےگا. آپ کی ٹریننگ ایسی کر دی گئی ہے کہ آپ لوگوں کو ہی کوسنے لگیں گے، حکومت کو نہیں. یہ ہوا ہی اس لئے ہے کہ کوئی آپ کو الگ الگ نامی – بےنامی اداروں کی مدد سے راشٹرواد کے ٹریڈ مل پر دوڑائے رکھے ہوئے ہے.

ہمارا فوجی کیوں اٹھارہ ہزار ماہانہ پاتا ہے؟ کیا رکن پارلیمنٹ، رکن اسمبلی کی تنخواہ ایک فوجی سے زیادہ ہونی چاہئے؟ فوجیوں پر تو کم سے کم سرحد پر کھڑے کھڑے ملک لوٹنے کا الزام نہیں ہے. وہ تو جان دے دیتے ہیں. ممبران اسمبلی ممبران پارلیمنٹ میں سے کتنے جیل گئے اور کتنے اور جا سکتے ہیں مگر ان سے حکومتیں بنتی ہیں اور چلتی ہیں. ان کے بے پناہ فنڈ کی گنگوتری کدھر ہے؟ راشٹرواد کی فکر کرنی ہے تو یہ بولو کہ سرحد سے چھٹی پرلوٹنے والا جوان جنرل بوگی یا سیکنڈ کلاس میں لدا کر کیوں جاتا ہے؟ اس کے لئے اے سی ٹرین کیوں نہیں بک ہوتی؟ اس کا بچہ ایسے اسکول میں کیوں پڑھتا جس کا ماسٹر مردم شماری کرنے گیا ہے. اس کی سیلری پچاس ہزار کیوں نہیں ہے؟

آپ جو ٹی وی پر اینكروں کی معرفت اس نامعلوم شخص کے امنگوں کے لئے رچے جا رہے تماشے کو صحافت سمجھ رہے ہیں وہ دراصل کچھ اور ہیں. آپ کو روز کھیںچ کھیںچ کر راشٹرواد کے نام پر اپنے پالے میں رکھا جا رہا ہے تاکہ آپ اس کے نام پر سوال ہی نہ کریں. دال کی قیمت پر بات نہ کریں یا مہنگی فیس کی بحث نہ کریں. اسی لئے میڈیا میں راشٹرواد کے خیمے بنائے جا رہے ہیں۔ اینكر حکومت سے کہہ رہا ہے کہ وہ صحافیوں پر دیش دروہ کا مقدمہ چلائے. جس دن صحافی حکومت کی طرف ہوگیا، سمجھ ليجيے گا وہ حکومت عوام کے خلاف ہو گئی ہے. صحافی جب صحافیوں پر نشانہ سادھنے لگے تو وہ کسی بھی حکومت کے لئے زریں لمحہ ہوتا ہے. بنیادی سوال اٹھنے بند ہو جاتے ہیں. جب پراویڈنٹ فنڈ کے معاملے میں چینلوں نے غریب خواتین مزدوروں کا ساتھ نہیں دیا تو وہ بنگلور کی سڑکوں پر ہزاروں کی تعداد میں نکل آئیں. کپڑا مزدوروں نے حکومت کو درست کر دیا. اس لئے لوگ دیکھ  کرسمجھ رہے ہیں. جے این یو کے معاملے میں یہی لوگ راشٹرواد کی آڑ لے کر لوگوں کی توجہ بھٹکا رہے تھے. فیل ہو گئے. اب کشمیر کے بہانے اسے دوبارہ لانچ کیا گیا ہے!

وزیر اعلی محبوبہ مفتی نے کہا ہے کہ برہان وانی کو چھوڑ دیا جاتا اگر فوج کومعلوم ہوتا کہ وہ برہان ہے. بی جے پی کی اتحادی محبوبہ نے برہان کو دہشت گرد بھی نہیں کہا اور اگر وہ ہے تو اس کے دیکھتے ہی مار دینے کی بات کیوں نہیں کرتی ہیں جیسے راشٹرواد کرتے ہیں. محبوبہ مفتی نے تو فوج سے ایک بڑی کامیابی کا کریڈٹ بھی لے لیا کہ اس نے نادانستہ طور پر مار دیا. اب تو فوج کی شان میں بھی گستاخی ہو گئی. کیا محبوبہ مفتی کو گرفتار کرکے دیش دروہ کا مقدمہ چلایا جائے؟ کیا اینکر لوگ یہ بھی مطالبہ کریں گے؟ کس حق سے صحافیوں کے خلاف دیش دروہ کا مقدمہ چلانے کی بات کر رہے ہیں؟ جس حکومت کے دم پر وہ کود رہے ہیں کیا وہ حکومت ایسا کرے گی کہ محبوبہ کو برخاست کر دے؟ کیا اس حکومت کا کوئی بڑا لیڈر محبوبہ سے یہ بیان واپس کروالے گا؟

اس لئے سیاست کو سیاست کی طرح دیکھئے. اس میں اگر راشٹرواد کا استعمال ہوگا تو ایک دن راشٹرواد کی حالت بھی یہ نیتا ملک کی خدمت جیسی کر دیں گے۔ جب بھی وہ ملک کی خدمت کا نام زبان پر لاتے ہیں، لگتا ہے کہ جھوٹ بول رہے ہیں. بلکہ ان کے منہ سے راشٹرواد کھوکھلا ہی لگتا ہے. ہم سب راشٹروادی ہیں. اسے معلوم کرنے کے لئے روز رات کو نو بجے ٹی وی دیکھنے کی نوبت آ جائے تو آپ کو راشٹرواد نہیں داد كھاج کھجلی ہے. نیم حکیم جس کی دوا ظالم لوشن بتاتے ہیں.

میں آپ کو مفت میں ایک مشورہ دیتا ہوں۔ چینلوں کو دیکھنے کے لئے کیبل پر ہر ماہ تین سے پانچ سو روپئے خرچ ہو ہی جاتے ہوں گے۔ جب پانچ سو روپئے دے کر راشٹرواد کی آڑ میں ہندو مسلم کے درمیان نفرت کی گولی ہی لینی ہے تو آپ کیبل کٹوا دیں. جب آپ نے نفرت ٹھان ہی لی ہے تو کیجئے نفرت. اس کے لئے کیبل کے پانچ سو، ردی اخباروں کے پانچ سو کیوں دے رہے ہیں؟ اپنا ایک ہزار تو بچا لیجیے!

تو آپ سے گزارش ہے کہ سیاست اور راشٹرواد میں فرق کیجئے. یہ وہ راشٹرواد نہیں ہے جو آپ سمجھ رہے ہیں. اس راشٹرواد کے نام پر فرقہ واریت ہے جو آپ دیکھنا ہی نہیں چاہتے. فرقہ واریت کا نیا نام ہے راشٹرواد. ضرورت ہے راشٹرواد کو فرقہ واریت سے بچانے کی اور ٹی وی کم دیکھنے کی.