Breaking News
Home / ملکی خبریں / ملک کی ترقی کے لیے مرکزی حکومت کو کارپوریٹ نوازنہیں بلکہ کسان نواز ہونا چاہئے۔ اڈوکیٹ شرف الدین کابیان۔ قرض کی معافی و دیگر مطالبات کو لیکر جنتر منتر پر بھوک ہڑتال پر بیٹھے کسانوں سے SDPI کے اعلی سطحی وفد نے ملاقات کی 

ملک کی ترقی کے لیے مرکزی حکومت کو کارپوریٹ نوازنہیں بلکہ کسان نواز ہونا چاہئے۔ اڈوکیٹ شرف الدین کابیان۔ قرض کی معافی و دیگر مطالبات کو لیکر جنتر منتر پر بھوک ہڑتال پر بیٹھے کسانوں سے SDPI کے اعلی سطحی وفد نے ملاقات کی 

نئی دہلی(ہرپل نیوز،ایجنسی) 2اپریل:کسانوں کی خود کشی کو روکنے کے لئے کسانوں کے بینک قرض کو معاف کرنے،ذراعتی پیداوار کی نفع بخث قیمتوں کی ادائیگی کاویری ندی کو سوکھنے سے بچانے،کاویری مینجمنٹ کمیٹی کے قیام سمیت کسانوں سے متعلق دیگر مطالبات کو لیکر پی اناکنو (ٖP. ANNAKANNU )کی قیادت میں)نیشنل ساؤتھ انڈین ریورس لنکنگ فارمرس ایسوسی ایشن) کے زیر اہتمام دہلی میں جنتر منتر پر گزشتہ 14مارچ سے جاری کسانوں کے 100 روزہ بھوک ہڑتال کو سوشل ڈیموکریٹک پارٹی آف انڈیا (SDPI) نے حمایت کیا ہے اور قرض کے بوجھ تلے دبے خود سوزی پر مجبور لاچار کسانوں کے مسائل کے حل کے لئے انکے ساتھ کھڑے ہونے کا اعلان کیا ہے۔ایس ڈی پی آئی کے قومی نائب صدر ایڈوکیٹ شرف الدین احمد اور نیشنل کوآرڈنیٹر ڈاکٹر نظام الدین خان پر مشتمل پارٹی کے ایک اعلی سطحی وفد نے جنتر منتر پر پہنچ کر کسانوں کے مظاہرے اور بھوک ہڑتال میں حصہ لیا اور بھوک ہڑتال کر رہے کسانوں کو سوشل ڈیموکریٹک پارٹی آف انڈیا کی طرف سے مکمل تعاون اور حمایت کی یقین دہانی کرائی۔واضح ہو کہ مرکزی حکومت نے ریاست تمل ناڈو کے کسانوں کو بجٹ میں2,000 کروڑ روپئے کا گرانٹ جاری کیا ہے ، جبکہ کسانوں کا مطالبہ ہے کہ مرکزی حکومت ریاست تمل ناڈو کے کسانوں کو 40,000کرور روپئیوں کا ریلیف پیکیج جاری کرے ۔ اڈوکیٹ شرف الدین احمد نے مرکزی حکومت سے پرزور مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ کسانوں کے ان جائز مطالبات کو پورا کرے۔ملک کی ترقی کے لیے مرکزی حکومت کو کارپوریٹ نواز نہیں بلکہ کسان نواز ہونا چاہئے۔ ہندوستان ایک زرعی ملک ہے اور ہمارے لیے یہ بڑی شرم کی بات ہے کہ ایک زرعی ملک میں کسانوں کو اس طرح کے مصائب و مشکلات درپیش آئیں اور وہ خود کشی کرنے پر مجبور ہوں۔ زراعتی پیداوار کی نفع بخش قیمتیں نہ ملنے، سوکھے کی مار سے فصلوں کی تباہی اور بینکوں کے قرضوں کو ادا نہ کر پانے کے چلتے جنوبی ریاستوں کے کسان خود کشی کرنے پر مجبور ہیں اور آئے دن اس طرح کی وارداتیں ہوتی رہتی ہیں جس کے چلتے مذکورہ مطالبات کو لیکرگزشتہ12مارچ سے جنتر منتر پر غیر معینہ مدت کے لئے دھرنے پر بیٹھے ہیں حکومت کی جانب سے انکے مطالبات پر کوئی توجہ نہ دئے جانے کی وجہ سے انھوں نے14مارچ سے بھوک ہڑتال شروع کر دیا ہے جن کی حمایت میں اب سوشل ڈیمو کریٹک پارٹی آف انڈیا بھی میدان میں ہے اور کسانوں کے حقوق ملنے تک ایس ڈی پی آئی ان کا ساتھ دیتے رہے گی اور ان کے لیے آواز اٹھاتی رہے گی۔

The short URL of the present article is: http://harpal.in/c9UnD

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے کھیتوں ک* نشان لگا دیا گیا ہے