Breaking News
Home / اہم ترین / مولانا ارشد مدنی نے کیاگائے کو قومی جانور کا درجہ دئے جانے کا مطالبہ،تین طلاق پرحکمراں پارٹی کے لیڈران پر لگایاسیاست کرنےکاالزام

مولانا ارشد مدنی نے کیاگائے کو قومی جانور کا درجہ دئے جانے کا مطالبہ،تین طلاق پرحکمراں پارٹی کے لیڈران پر لگایاسیاست کرنےکاالزام

نئی دہلی(ہرپل نیوز،ایجنسی)10 مئی : جمعیت علمائے ہند نے مرکزی حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ گائے کو قومی جانور قرار دیا جائے اور قانون سازی کے ذریعہ ملک بھر میں ذبیحہ گاو پر پابندی لگادی جائے۔جمعیت کے صدر مولانا سید ارشد مدنی نے ایک پریس کانفرنس میں الزام لگایا کہہ گئو رکشکوں کی یہ جماعتیں ملک میں خوف کا ماحول پیدا کر رہی ہیں۔ ولانا مدنی نے کہا کہ جمعیت علماء ء ہند چاہتی ہے کہ خوف کے اس ماحول کو فوری طور پر ختم کرکے ملک میں امن کا ماحول پیدا کرنے کے لئے حکومت گائے کو قومی جانور قرار دے دے اور قانون بنا کر ملک بھر میں گائے ذبح کرنےپر پابندی لگادے۔انہوں نے کہا کہ لائسنسوں کی تجدید یا نئے لائسنس بنوانے کے لئے کوئی انتباہ یا وقت دیئے بغیر ہی گوشت کی دکانوں اور مذبح کو بند کر دیا گیا۔ اس کی وجہ سے گوشت کے کاروبار کو بڑا نقصان ہوا ہے۔انہوں نے یہ الزام لگاتے ہوئے کہ اتر پردیش، راجستھان، مہاراشٹر،ہریانہ اور اتراکھنڈ میں جانوروں کےتاجروں کے قتل کے پے بہ پے واقعات کے باوجود مرکزی حکومت اور بھارتیہ جنتا پارٹی کی ریاستی حکومتیں خاموش تماشائی بنی ہوئی ہیں۔مولانا نے کہا کہ اس وقت مسلمانوں کے تعلق سے سب سے اہم مسئلہ آسام میں غیر ملکی شہریت کا ہےجہاں بعض فرقہ پرست حلقوں نے 1985 کے آسام معاہدے کو منسوخ کرنے کی عرضی داخل عدالت کر رکھی ہےمولانا مدنی نے کہا کہ 1985 کے معاہدے کے تحت شہریت کے لئے کٹ آف ڈیٹ 25 مارچ 1971 ہے لیکن اب 32 سال بعد پھر 1950کو شہریت کا مسئلہ حل کرنے کی بنیاد بنانا سراسر ناانصافی ہے۔

The short URL of the present article is: http://harpal.in/o6BAN

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے کھیتوں ک* نشان لگا دیا گیا ہے