Breaking News
Home / اہم ترین / نوٹوں پر پابندی سے ریاست کرناٹک کو 8 ہزار کروڑ کا نقصان:وزیر برائے کوآپریشن ایچ ایس مہادیو پرساد کا بیان

نوٹوں پر پابندی سے ریاست کرناٹک کو 8 ہزار کروڑ کا نقصان:وزیر برائے کوآپریشن ایچ ایس مہادیو پرساد کا بیان

بنگلورو(ہرپل نیوز)۔24/نومبر: مرکزی حکومت کی طرف سے اچانک ہزار اور پانچ سو روپیوں کے نوٹوں پر پابندی کے سبب ریاست کے خزانے کو اب تک 8ہزار کروڑ روپیوں کا نقصان اٹھانا پڑا ہے۔ یہ بات آج وزیر برائے کوآپریشن ایچ ایس مہادیو پرساد نے بتائی۔بلگاوی میں اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ نوٹوں پر پابندی کی وجہ سے ریاستی حکومت کو تجارتی ٹیکس، گاڑیوں کے ٹیکس اور دیگر الگ الگ بابوں سے ہونے والی آمدنی میں غیر معمولی گراوٹ آئی ہے۔ انہوں نے کہاکہ نوٹوں پر پابندی کی وجہ سے کوآپریٹیو شعبہ بری طرح متاثر ہوا ہے۔ ان کوآپریٹیو اداروں کی طرف سے جو قرضہ جات دئے گئے ہیں،ان کی وصولی میں مکمل رکاوٹ آگئی ہے۔ کوآپریٹیواداروں کو مرکزی حکومت کے اس اقدام سے دو تا تین ہزار کروڑ روپیوں کا خسارہ ہوگا۔ جبکہ مختلف ٹیکسوں کے ذریعہ ہونے والے خسارہ کی رقم پانچ ہزار کروڑ روپیوں تک کی بتائی جارہی ہے۔ انہوں نے کہاکہ انکم ٹیکس کی جو رقم مرکزی حکومت ریاست سے وصول کرتی ہے اس میں ریاست کو کوئی حصہ داری نہیں دی جاتی۔ مرکزی حکومت کو انکم ٹیکس کے ذریعہ کرناٹک سے کافی آمدنی ہونے کے باوجود بھی اس ساری آمدنی کو مرکزی حکومت ہی ہڑپ لیتی ہے۔ ریاست کے خزانے کو نوٹوں پر پابندی کی وجہ سے جو خسارہ جھیلنا پڑ رہا ہے اس سے مرکزی حکومت کو متوجہ کرایا گیا ہے۔مسٹر مہادیو پرساد نے مطالبہ کیا کہ پرانے نوٹوں کو جمع کرنے کی گنجائش کوآپریٹیو بینکوں کیلئے بھی فراہم کی جائے۔ اس سلسلے میں وزیراعلیٰ نے دو مرتبہ مرکزی حکومت کو مکتوب روانہ کئے،لیکن کوئی جواب موصول نہیں ہوا ہے۔

The short URL of the present article is: http://harpal.in/KbWjo

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے کھیتوں ک* نشان لگا دیا گیا ہے