Breaking News
Home / اہم ترین / وزیر اعظم کی گولی مار دینے کی بات جچی نہیں رویش کمار

وزیر اعظم کی گولی مار دینے کی بات جچی نہیں رویش کمار

گولی مار دینے کی بات مجھے نہیں جچی، بھلے ہی یہ بات اس لئے کہی گئی ہو کہ ٹھوس طریقہ سے میسج چلا جائے. میری رائے میں وزیر اعظم کو ایسی مبالغہ آرائی سے بچنا چاہئے تھا. جن گئو رکشکوں کو وہ دو دن سے سماج دشمن عناصر، نقلی گئو رکشک، ہندوستانی اتحاد کو توڑنے والا مٹھی بھر گروہ بتا رہے تھے، ان کے لئے یہ کہنا کہ مجھے گولی مار دو مگر میرے دلت بھائیوں کو مت مارو! جو لوگ وزیر اعظم کی نظر میں قانون اور سماج کے مجرم ہیں انہیں ہمارے وزیر اعظم کو گولی مارنے کی اجازت قطعی نہیں دی جا سکتی. الہ آباد کی پریورتن ریلی میں بھی وزیر اعظم نے کہہ دیا تھا کہ مجھے یوپی میں ایک بار موقع دیجئے، پانچ سال میں اپنے کسی کام کے لئے آپ کا نقصان کر دیا تو مجھے لات مار کر باہر کر دیجیئے گا.

وزیر اعظم کو لات مارنا یا گولی مارنا ٹائپ کی مبالغہ آمیزی سے بچنا ہی چاہئے. جس مسئلہ پر وہ بول رہے تھے اس کی اخلاقی ذمہ داری ان کی تو بنتی ہی ہے، کیونکہ بہت سے واقعات ان کی یا ان کی پارٹی کے زیرانتظام ریاستوں میں ہوئے ہیں. مگر ایسا نہیں ہے کہ دلتوں پر تشدد کے واقعات دوسری پارٹیوں کی حکومتوں میں نہیں ہوئے ہیں. دلتوں پر مظالم کے واقعات وہاں بھی ہو رہے ہیں یا ہوئے ہیں جہاں بی جے پی کی حکومت نہیں ہے. لیکن ملک کے وزیر اعظم کے ناطے یا کئی ریاستوں میں حکومت چلانے والی بی جے پی کے سربراہ اعلی ہونے کے ناطے وہ یہ تنبیہ پہلے بھی کر سکتے تھے. نہ کرنے کی وجہ سے بہت سے لوگوں میں پیغام گیا کہ ان گئو رکشکوں کو بی جے پی حکومتوں کا تحفظ حاصل ہے، سنگھ اور سنگھ کی تنظیموں کی حمایت حاصل ہے. اس لئے ان کے خلاف بی جے پی کے زیرانتظام حکومتوں نے بھی کوئی ٹھوس کارروائی نہیں کی مگر یہ بھی صحیح ہے غیر بی جے پی حکومتوں نے بھی ان گئو رکشکوں کو ویسی ہی چھوٹ دی. انہوں نے بھی کوئی ٹھوس کارروائی نہیں کی. وہ بھی لاچار نظر آئے. اس لئے وزیر اعظم اس مسئلے کو خطاب کریں، نہ کہ اس کے بہانے خود کو.

پر وزیر اعظم کے دوسرے رخ کو دیکھنا ہے تو آپ جی ایس ٹی پر دیئے گئے ان کی تقریر سن سکتے ہیں. ایک ٹیکنیکل موضوع کو وہ کتنی آسانی سے ایوان میں بول گئے. آسانی سے اور سائشتگی سے بھی. اگر وزیر خزانہ کو برا نہ لگے تو وہ وزیر اعظم سے یہ فن سیکھ سکتے ہیں کہ جی ایس ٹی پر عوام سے کیسے بات چیت کی جا سکتی ہے. لیکن کیا بات ہے کہ جی ایس ٹی پر آسانی اور سائشتگی سے بولنے والے وزیر اعظم کے گئو رکشکوں پر دئے گئے بیان کا اپوزیشن نے اس طرح استقبال نہیں کیا جس طرح پاکستان میں راج ناتھ سنگھ کی تقریر کا کیا. پہلی تنقید یہ ہوئی کہ پہلا کہ انہوں نے صرف دلتوں کے بارے میں کہا، مسلمانوں کے بارے میں نہیں جبکہ اس تشدد کا شکار وہ بھی ہو رہے ہیں. دوسری تنقید یہ ہو رہی ہے کہ انہوں نے بہت دیر سے بولا. لیکن کیا ناقدین یہ نہیں دیکھ پا رہے ہیں کہ ان کے اس بیان سے ایک جھٹکے میں ان گئو رکشکوں کی سیاسی، مذہبی اور سماجی منظوری ختم ہو گئی ہے. ابھی تک یہ جب بھی  اسکرین یا سڑک پر وارد ہوتے تھے تو کسی نظریے اور حکومت کے تحفظ میں پلنے والے سماج دشمن عناصر لگتے تھے. وزیر اعظم نے ان کے سماج دشمن عناصر ہونے کی تصدیق کر دی ہے. پہلے بھی کچھ لوگ ان گئو رکشکوں کی حرکتوں کو ہندوستانی جمہوریت کا خطرہ بتا رہے تھے، فرق یہ تھا کہ اس وقت سوشل میڈیا کے بدمعاش حامی انہیں حکومت مخالف شیشے سے دیکھ رہے تھے، ہندوستان کو بدنام کرنے والے عناصر کے طور پر دیکھ رہے تھے .

وزیر اعظم یہی بات پہلے کہہ دیتے تو ہمارے گجرات کے اونا میں چار دلت نوجوانوں کو نیم برہنہ کر کے پیٹنے کی ہمت کوئی جماعت نہیں کر پاتی. مدھیہ پردیش کے ریلوے اسٹیشن پر ایک غریب عورت کو اتار کر اسے مارا نہیں جاتا. مارنے کے بعد اسے گرفتار کرنے کی ہمت نہ ہوتی. نہ ہی ہریانہ میں اس شخص کو گئو رکشک، ٹرک سے اتار کر گوبر اور پیشاب پلا پاتے. دادری کے اخلاق کا قتل نہ ہوتا اور اس کے بعد كتركوں کی سیاست نہ ہوتی. کم از کم وزیر اعظم اس وقت تو روک ہی سکتے تھے جب بہار انتخابات میں بی جے پی کے پوسٹروں پر گائے کی تصویر چھپ رہی تھی. ایسے اشتعال انگیز پوسٹروں کے بارے میں ہی الیکشن کمیشن نے مرکز سے واضح حقوق مانگے ہیں تاکہ ان پر پابندی لگائی جا سکے.

یہ نقلی گئو رکشک کون ہیں؟ یہ کس نظریے کے سیاسی آشرم میں پلتے بڑھتے ہیں؟ سچ بات یہ ہے کہ یہ تب بھی تھے جب بی جے پی کی حکومت مرکز یا کئی ریاستوں میں نہیں تھی. ہو سکتا ہے کہ ان کی شرارت دو سال میں زیادہ بڑھ گئی ہو. جب مرکزی وزیر اور بی جے پی لیڈر گئو رکشا کے نام پر انہیں تیوروں میں بیان دینے لگیں تو کیا سماج مخالف کام کرنے والے گئو رکشک، دونوں ایک ہی زبان میں بات کرتے نظر نہیں آئے. وزیر اعظم اور سنگھ نے ریاستی حکومتوں کو یہ کہہ کر کھلا پیغام دے دیا ہے کہ ان سب کا بایوڈاٹا تیار ہو اور سخت کارروائی کی جائے. ان کے بیان کا یہ سب سے مضبوط پہلو ہے وہ انہیں ریاستی حکومتوں کو کارروائی کے لئے کہہ رہے ہیں جن پر شہ دینے کے الزامات ہیں. دیکھتے ہیں کس ریاست میں کارروائی ہوتی ہے. مدھیہ پردیش میں یا ہریانہ میں یا یوپی، بہار یا بنگال میں. وزیر اعظم کے بیان سے گئو رکشک مچل گئے ہیں، آر ایس ایس نے بھی اتوار کی رات بیان جاری کر کے وزیر اعظم کے بیان کی حمایت کر دی. آر ایس ایس نے بھی کہا ہے کہ سماج کے کچھ سماج دشمن عناصر کے ذریعہ گئو رکشا کے نام پر کچھ مقامات پر قانون اپنے ہاتھ میں لے کر اور تشدد پھیلا کر سماج کا بھائی چارہ آلودہ کرنے کی کوشش کی جا رہے ہیں. اس گئو رکشا اور گئو سیوا کے مقدس کام کے تئیں تشدد پھیلا کر معاشرے کا بھائی چارہ آلودہ کرنے کی کوششیں کی جا رہی ہیں. آر ایس ایس دیش واسیوں سے اپیل کرتا ہے کہ گئو رکشا کے نام پر کچھ مٹھی بھر موقع پرست لوگوں کی ایسی قابل مذمت کوششوں کو، گئو رکشا کے مقدس کام میں لگے دیش واسیوں سے نہ جوڑیں اور ان کا اصلی چہرہ سامنے لائیں.

چپے چپے پر اپنی تنظیم اور شاکھا کی موجودگی کا دعوی کرنے والے سنگھ کو بھی لوگوں سے اپیل کرنی پڑ رہی ہے کہ وہ ایسے لوگوں کا اصلی چہرہ سامنے لائیں. یہ اپیل اپنے سیوم سیوکوں سے کرنی تھی کہ آپ معلوم کرکے بی جے پی حکومتوں کے وزراء کو اطلاعات دیں اور کارروائی کروائیں. لیکن سنگھ کا ایک اور بیان ہے، دوسرا بیان کیوں جاری کرنا پڑا یہ تو ہم نہیں بتا سکتے لیکن اس میں کافی کچھ بدلا بدلا سا لگا. کہا گیا کہ موجودہ وقت میں ملک کے مختلف مقامات پر پسماندہ بھائیوں پر ظلم اور ہراساں کرنے کے ہو رہے واقعات کی آر ایس ایس کڑے الفاظ میں سخت مذمت کرتا ہے. قانون اپنے ہاتھ میں لے کر اپنے ہی سماج کے بھائیوں کو تشدد کا نشانہ بنانا یہ صرف ناانصافی ہی نہیں، انسانیت سوزی کو بھی ظاہر کرتا ہے.

کیا پسماندہ طبقات کو شامل کرنے کے لئے پیر کو بیان جاری ہوا. پر دونوں ہی بیان میں مسلمانوں کا کوئی ذکر نہیں آیا. اس کے علاوہ سنگھ کچھ بیلنس بھی کرتا نظر آیا. وزیر اعظم نے ستر اسی فیصد گئو رکشکوں کو سماج دشمن عناصر کہا ہے. سنگھ کے بیان میں کچھ مٹھی بھر گئو رکشکوں کی بات کہی گئی ہے. جب گئو رکشکوں کے ظلم پر راجیہ سبھا میں بحث ہوئی تب حزب مخالف کے اراکین پارلیمنٹ کے علاوہ مایاوتی نے صاف صاف کہا تھا کہ گئوركشا کے نام پر پہلے پورے ملک کے اندر مسلمانوں کے ساتھ تشدد کیا گیا، نوجوان کے ساتھ کیا گیا اور اب مدھیہ پردیش میں جہاں بی جے پی کی حکومت ہے، وہاں پر خواتین کو سرعام پیٹا گیا، پولیس تماشا دیکھتی رہی، بھیڑ تماشا دیکھتی رہی. اس سلسلے میں حکومت کیا کہنا چاہے گی؟

وزیر اعظم نے ٹھیک ہی کہا کہ گایوں کو پلاسٹک كھلوانا بند کر دیا جائے تو وہی سب سے بڑی گئو رکشا ہوگی. انہیں اپنی پارٹی کی حکومتوں کو بھی الگ سے ہدایات دینی چاہئے تھی کیونکہ مدھیہ پردیش اور راجستھان نے گائے سے متعلق محکمہ کا قیام کیا ہے.

اس کے بعد بھی راجستھان پتریکا کی اس خبر کے مطابق راجستھان کے جے پور کے ہنگونيا گئو شالا میں گزشتہ تین سال میں 27000 گائیں مر گئیں. ہم اپنی طرف سے اس رپورٹ کی تصدیق نہیں کر سکتے پھر بھی یہ تعداد اتنی بڑی ہے کہ گئو شالاؤں کے اندر بد انتظامی پر ایماندارانہ نظر کا تقاضا کرتی ہے. بیماری کی وجہ سے گایوں کی موت ہوتی ہے لیکن بھوک سے ایک بھی گائے مری ہے تو یہ دردناک ہے. سنگھ کو بھی ان سچے گئو رکشکوں سے پوچھنا چاہئے تھا کہ وہ گایوں کی رکشا کرتے کرتے کہاں نکل گئے ہیں کہ گئو شالاؤں میں گائیں مر رہی ہیں. گائیں جب گئو شالاؤں میں محفوظ نہیں ہیں تو کہاں ہیں. یہ سوال صرف راجستھان سے ہی نہیں بلکہ بہار اور بنگال سے بھی پوچھا جانا چاہئے کہ ان کے یہاں کی گئو شالاؤں کی کیا صورت حال ہے.

The short URL of the present article is: http://harpal.in/47ozG

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے کھیتوں ک* نشان لگا دیا گیا ہے