Breaking News
Home / اہم ترین / چائنس پکوانوں پرگرسکتی ہے گاج۔فرائیڈ رائس،گوبی منچوری پر پابندی زیر غور: رمیش کمار

چائنس پکوانوں پرگرسکتی ہے گاج۔فرائیڈ رائس،گوبی منچوری پر پابندی زیر غور: رمیش کمار

بنگلورو۔(انقلاب نیوز بیورو) 21؍مارچ:سڑکوں کے کنارے فروخت ہونے والے چینس پکوانوں فرائیڈ رائس ، گوبی منچورین وغیرہ میں لذت پیدا کرنے اور انہیں خوشبودار بنانے کیلئے ٹیسٹنگ پاؤڈر استعمال کیا جاتا ہے ، اس ٹیسٹنگ پورڈر کے استعمال سے انسانی صحت پر بہت مضر اثرات مرتب ہوتے ہیں، لیکن اس حقیقت کو محکمۂ صحت نے نظر انداز کرتے ہوئے رپورٹ دی ہے کہ افسران کو اس کے بارے میں کوئی جانکاری نہیں ہے، اسی لئے محکمۂ صحت اس طرح کے پکوان پکانے والوں کے خلاف کارروائی کرنے سے قاصر ہے، یہ بے بسی آج وزیر صحت رمیش کمار نے بذات خود ظاہر کی۔ایوان بالا میں بی جے پی رکن رام چندرے گوڈا نیسڑک کے کنارے فروخت ہونے والے ان پکوانوں میں ٹیسٹنگ پاؤڈر کے کثرت سے استعمال کا حوالہ دیا اور وزیر موصوف سے اس سلسلے میں جواب طلب کیا، رمیش کمار نے جواب میں بتایاکہ اس سلسلے میں اب تک محکمہ کی طرف سے کوئی کارروائی نہیں کی گئی ہے۔ افسران کے پاس بھی اس سلسلے میں کوئی جواب دستیاب نہیں ہے۔انہوں نے کہا کہ مونو سوڈیم ،کلفامیٹ نامی کیمیکل پر مشتمل ٹیسٹنگ پاؤڈر کھانوں کی لذت بڑھانے کیلئے استعمال کیا جاتا ہے، لیکن تحقیقات کے مطابق اگر مقررہ مقدار سے زیادہ اس کیمیکل کا استعمال ہو تو سردرد ، پیٹ درد ، بہت زیادہ پسینہ ، سینے میں درد ، سرچکرانے کی شکایات عام ہیں۔ عوامی صحت کیلئے نقصادہ کمیکل کے استعمال پر جتنی جلد پابندی لگائی جائے بہتر ہوگا۔ رمیش کمار نے کہا کہ اس سلسلے میں وہ افسران سے رپورٹ طلب کرکے مناسب کارروائی کریں گے۔ انہوں نے کہاکہ مونو سوڈیم گلفامٹ پاؤڈر کا زیادہ مقدار میں استعمال نہ کرنے کی سختی پہلے ہی سے لاگو کی گئی ہے۔ عوامی صحت پر مضر اثرات مرتب کرنے والے اس ٹیسٹنگ پاؤڈر پر مستقل پابندی لگانے کا رام چندرے گوڈا نے پرزور مطالبہ کیا ہے۔سرکاری اسپتالوں میں مخلوعہ 1065ماہر ڈاکٹر اور 365عام ڈاکٹر کی بھرتیوں کیلئے ہنگامی بھرتی مہم شروع کردی گئی ہے۔ رمیش کمار نے یہ بات حکمران پارٹی کے ہنس راجا کے سوال پر بتائی۔ انہوں نے کہاکہ باقی عہدوں کو کرناٹکا پبلک سرویس کمیشن کے ذریعہ پر کیاجائے گا۔کرناٹک کے اسپتالوں میں ڈاکٹروں کو 1.25لاکھ روپیوں تک کی تنخواہ، ماہر ڈاکٹروں کیلئے پیش کی گئی ہے، لیکن اس کے باوجود بھی کوئی ڈاکٹر یہاں خدمت کیلئے آمادہ نہیں ہے۔ انہوں نے کہاکہ ریاست کے گیارہ سرکاری ضلع اسپتالوں میں ڈپلوما کورس کی شروعات کی جاچکی ہے

The short URL of the present article is: http://harpal.in/LtJzM

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے کھیتوں ک* نشان لگا دیا گیا ہے