Breaking News
Home / اہم ترین / کمل ہاسن کے منہ پر سیاہی پوتنے والے کو 25 ہزار کا انعام د ےگی ہندووادی تنظیم۔جنکو تنقید برداشت نہیں وہ جان کے درپے ہو گئے۔ کمل ہاسن کا ر د عمل

کمل ہاسن کے منہ پر سیاہی پوتنے والے کو 25 ہزار کا انعام د ےگی ہندووادی تنظیم۔جنکو تنقید برداشت نہیں وہ جان کے درپے ہو گئے۔ کمل ہاسن کا ر د عمل

علی گڑھ (ہرپل نیوز ،ایجنسی)5نومبر۔ فلم اداکار کمل ہاسن کے منہ پر سیاہی پوتنے والے کو انعام دینے کا اعلان کیا گیا ہے۔ ہندووادی تنظیم سے وابستہ عامر راشد نے یہ اعلان کیا ہے۔ آر ایس ایس سے منسلک قوم پرست رہنما عامر راشد نے اعلان کیا ہے کہ کمل حسن کے منہ پر جو بھی شخص سیاہی پوتےگا اس شخص کو 25،000 نقد انعام دیا جائے گا۔علی گڑھ کے قوم پرست رہنما عامر رشید نے فلم اداکار کمل حسن کے بیان پر اعلان کر دیا ہے کہ ہندوتو کو بدنام کر نے کی جو کوشش کی ہے اس کو برداست نہیں کریں گے۔ ہندو مسلم اتحاد اس ملک کی شناخت ہے، جس کا دنیا بھر میں لوہا مانا جاتا ہے۔ان کا کہنا ہے کہ کمل ہاسن جیسے لوگوں کے کبھی بھی منصوبے کامیاب نہیں ہونے دیں گے۔ جو بھی شخص کمل ہاسن کے منہ پر سیاہی پوتےگا اسکو 25 ہزار انعام دیں گے۔ کمل ہاسن نے کہا تھا کہ 'ملک میں ہندو دہشت گردی کا امکان بڑھ گیا ہے' جبکہ ملک میں کبھی ہندو بنیاد پرستی نہیں رہاْعامر راشد نے کہا کہ بھارت میں دنیا کے تمام مذاہب کے ماننے والے اس ملک میں شان سے رہ رہے ہیں۔ اگر ہندو شدت پسند ہوتا تو اتنے مذہب کے ماننے والے اس ملک میں رہ ہی نہیں پاتے۔ کمل ہاسن کے بیان کی مذمت کی جا رہی ہے۔ اتنا ہی نہیں ان کے بیان کو لے کر مقدمہ درج کرانے کی تیاری بھی ہو رہی ہے۔کچھ وقت پہلے بحث تھی کہ کمل ہاسن سیاست میں داخل کر سکتے ہیں۔ اپنے فین کلب کے ساتھ کمل ہاسن میں چنئی میں میٹنگ بھی کی تھی۔ میڈیا میں کمل ہاسن کے سیاست میں آنے کی خبریں وسیع پیمانے پر نشر بھی کی گئیں. کمل ہاسن کے ہندو تنظیموں کے خلاف دیے گئے بیان سے شمالی ہندوستان میں شدید ناراضگی ہے۔ ہندووادی تنظیم اسے کمل حسن کے سیاست بیان کے طور پر دیکھ رہے ہیں

آر ایس ایس سے منسلک قوم پرست رہنما عامر راشد نے اعلان کیا ہے کہ کمل حسن کے منہ پر جو بھی شخص سیاہی پوتےگا اس شخص کو 25،000 نقد انعام دیا جائے گا۔علی گڑھ کے قوم پرست رہنما عامر رشید نے فلم اداکار کمل حسن کے بیان پر اعلان کر دیا ہے کہ ہندوتو کو بدنام کر نے کی جو کوشش کی ہے اس کو برداست نہیں کریں گے۔ ہندو مسلم اتحاد اس ملک کی شناخت ہے، جس کا دنیا بھر میں لوہا مانا جاتا ہے۔ان کا کہنا ہے کہ کمل ہاسن جیسے لوگوں کے کبھی بھی منصوبے کامیاب نہیں ہونے دیں گے۔ جو بھی شخص کمل ہاسن کے منہ پر سیاہی پوتےگا اسکو 25 ہزار انعام دیں گے
تنقید برداشت نہیں کرپانے والے لوگ اب میری جان لینا چاہتے ہیں : اداکار کمل ہاسن: معروف اداکار کمل ہاسن نے اپنے مخالفین کو کرار جواب دیتے ہوئے کہا ہے کہ جو تنقید کے سامنے کھڑا نہیں ہوسکتے ، اب وہ ان کی جان لینا چاہتے ہیں ۔ کمل ہاسن نے کسانوں کے ایک گروپ کو خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اگر ہم ان پر سوال اٹھاتے ہیں تو وہ ہمیں ملک مخالف قرار دیتے ہیں اور جیل بھیجنا چاہتے ہیں ۔ اب چونکہ جیلوں میں تو کوئی جگہ خالی نہیں ہے ، اس لئے وہ ہمیں گولی مار کر ختم کرنا چاہتے ہیں۔
انہوں نے یہ باتیں اکھل بھارتیہ ہندو مہا سبھا کے نائب صدر اشوک شرما کے بیان کے جواب میں کہیں ۔ شرما نے کمل ہاسن کو ہندو دہشت گردی سے متعلق مضمون لکھنے پر کہا تھا کہ ان کے جیسے لوگوں کو گولی مار دی جانی چاہئے ۔قابل ذکر ہے کہ ایک ہفتہ وار میگزین میں ہندو دہشت گردی پر مضمون لکھنے کی وجہ سے کمل ہاسن ہندو شدت پسندوں کے نشانے پر ہیں۔ انہوں نے ہندو دہشت گردی کے بارے میں کہا تھا کہ دائیں بازو نے اب اپنی طاقت کا استعمال کرنا شروع کر دیا ہے۔ انہوں نے کہا تھا کہ دایاں بازو تشدد میں ملوث ہے اور ہندو کیمپوں میں دہشت گردی گھس چکی ہے۔ ہاسن نے مزید لکھا تھا کہ کوئی یہ نہیں کہہ سکتا کہ ہندو دہشت گردی کا وجود نہیں ہے۔ انہوں نے لکھا کہ ہندو شدت پسند پہلے بات چیت میں یقین رکھتے تھے ، لیکن اب وہ تشدد میں ملوث ہیں۔

The short URL of the present article is: http://harpal.in/UHLbC

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے کھیتوں ک* نشان لگا دیا گیا ہے