Breaking News
Home / اہم ترین / کیا گائے کے نام پر الور کا واقعہ آخری ہوگا؟سینئرصحافی رويش کمار کی تحریر

کیا گائے کے نام پر الور کا واقعہ آخری ہوگا؟سینئرصحافی رويش کمار کی تحریر

6/ اگست 2016 کو وزیر اعظم نریندر مودی نے کہا تھا: 'گوركشا کے نام پر کچھ لوگوں نے جو اپنی دکانیں کھول کر بیٹھ گئے ہیں، مجھے اتنا غصہ آتا ہے. گو بھكت الگ ہے، گو رکشا مختلف ہے. میں نے دیکھا ہے کہ کچھ لوگ جو پوری رات اینٹي سوشل ایكٹوٹي کرتے ہیں، لیکن دن میں گوركشك کا چولا پہن لیتے ہیں. میں ریاستی حکومتوں سے درخواست کرتا ہوں کہ اس طرح جو گوركشك بنتے ہیں ان کی لسٹ تیار کریں ، 70-80 فیصد ایسے نکلیں جو ایسے گورکھ دھندے کرتے ہیں، جنھیں سماج قبول نہیں کرتا۔ لیکن آپ ان برائیوں سے بچنے کے لئے گوركشا کا چولا پہن کر نکلتے ہیں اور اگر واقعی میں وہ گوسیوك ہیں، تو میں ان سے درخواست کرتا ہوں کہ ایک کام کیجیے، سب سے زیادہ گایے قتل کی وجہ سے نہیں، پلاسٹک کھانے سے مرتی ہیں۔ تو آپ کو کم از کم گائے کو پلاسٹک کھانا بند کروا دیں۔ لوگوں کو پلاسٹک کا اخراج بند کرا دیں تو وہ بھی بڑی گوسیوا ہوگی. لہذا رضاکارانہ اوروں کو ہراساں کیا کرنے کے لئے نہیں ہوتی. گئو حفاظت یا گئو کشی کے تناظر میں دو ڈھائی سال میں جتنی بھی بحثیں ہوئی ہیں، ان میں حکومت کی طرف سے سب سے بڑا اور مستند بیان یہی ہے کہ 70-80 فیصد گئو محافظ فرضی ہوتے ہیں. امید ہے وزیراعظم اب بھی اپنی اس رائے پر قائم ہوں گے. ہمیں یہ نہیں معلوم کہ وزیر اعظم کی اس اپیل کا ریاستی حکومتوں پر کیا اثر پڑا. کم از کم موجودہ تنازعہ کے تناظر میں راجستھان کے وزیر داخلہ ہی بتا سکتے ہیں کہ انہوں نے وزیر اعظم کی اپیل پر فرضی گئو دفاع یا گئو حفاظت کے نام پر دکان چلانے والوں کی کوئی فائل بنائی ہے یا نہیں. راجستھان کے وزیر داخلہ گلابچد کٹاریا جی ہی بتا سکتے ہیں کہ ہندو چوکی کیا ہے. یہ کس قانون سے بنا ہے. ہندو چوکی کا داروغہ کون ہے، ایس پی کون ہے، ایس ایس پی کون ہے اور ڈی جی ہندو چوکی کون ہے. یہ ہم نہیں کہہ رہے بلکہ الور سے بی جے پی کے مقبول ممبر اسمبلی جناندیو آہوجا جی نے کہا ہے. ہندو چوکیاں کس قانون سے بنی ہیں یا ہندو نام رکھ لینا ہی قانون ہے. عوام تو بھیڑ ہے اور بھیڑ طریقہ کار ہے. یہ سن کر لگے گا کہ آہوجا جی عوام کو بھڑکا رہے ہیں. نہیں ایسا نہیں کر رہے ہیں. انہوں نے بس یہی کہا کہ عوام تو بھیڑ ہے اور بھیڑ طریقہ کار ہے. بلکہ آہوجا جی کی اس بات کے لئے بھوری بھوری تعریف کی جانی چاہیے کہ انہوں نے یہ بھی کہا ہے کہ عوام کو پیٹنا نہیں چاہئے. ایسی بات کے لئے قانون ہے. اس بیان کے بعد انہوں نے یہ بھی کہا ہے کہ 'ہمارے یہاں جو ہندو چوکیاں بنی ہیں، ان سب کو ہم نے انسٹرکشن دیا ہے کہ گئو اسمگلروں سے کسی طرح کی مارپیٹ نہیں کرنی ہے، انھیں پکڑ کرکے پولیس کے حوالے کر دینا ہے.' اس کے لئے بھی بھوری بھوری تعریف کی جانی چاہئے. یہ ان کے بیان کے مثبت پہلو ہے. لیکن ہندو چوکیوں کی بات سن کر میں چونک گیا. کیا الور پولیس کو ہندو چوکیوں کی معلومات ہے کہ پورے میوات میں ایسی چوکیاں بنی ہے. میوات ہریانہ میں ہے. الور راجستھان میں ہے. الور کے ممبر اسمبلی نے ہریانہ کے میوات میں ہندو چوکیاں کیوں بنوائی ہیں. کیا ہریانہ حکومت کو ہندو چوکیوں کی معلومات ہے. یہ سب سوال تو بنتے ہیں . آہوجا جی نے جو کہا ہے، اس سے کم راجستھان پولیس کو سنجیدگی سے تو لینا ہی چاہئے. نہ بھی لے تو کم از کم اس کی کوتاہیوں کو دور کرنا چاہئے. اگر راجستھان پولیس اچھا کام کر رہی ہوتی تو ہندو چوکی بنانے کی شاید نوبت ہی نہیں آتی. ایک بار پھر بتا رہا ہوں کہ آہوجا نے کہا ہے کہ 'پورے میوات میں نے ہندو چوکیاں اور گئو رکشا چوکی بنایی ہیں. پولیس چوکیاں اتنا اچھا کام نہیں کر رہی ہیں۔

بی جے پی کو ہرانے کی سیاست: اهوجي جی نے اپنے اس بیان میں کہا ہے کہ وزیر داخلہ نے چھ پولیس چوکیاں گئو رکشا کے لئے بنائی ہیں. جو اچھا کام نہیں کر رہی ہیں. گئو رکشا کے لئے بنی پولیس چوکیوں کی ہمیں کوئی معلومات نہیں ہے، یہ ہماری کمی ہے. کم از کم ہندو چوکی اور گئو رکشا کے لئے بنی پولیس چوکیوں کے درمیان تقابلی رپورٹ تو ہونی ہی چاہئے تھی. اب ایک سوال آپ سے بھی ہے اور خود سے بھی ہے. ہم سب کا گائے میں ایمان ہے. بہتوں کی گائے میں ویسے ہی ایمان نہیں ہے، جیسی ہمارا ہے. گائے میں ایمان ہونا، اس کی عبادت کرنا، تعظیم رکھنا بالکل ٹھیک اور عام بات ہے. اچھی بات بھی ہے. ایمان تو دیگر کئی چیزوں میں ہے تو کیا اس کے لئے ہم کسی بھیڑ کو اجازت دے سکتے ہیں. اتنی بحث ہو گئی، سب کے بیان آ گئے، ریلیاں ہو گئیں، اس کے بعد بھی بھیڑ کا حوصلہ کیوں نہیں تھم رہا ہے. اگر آپ گئو رکشا کے نام پر مار دیئے گئے، پہلو خان ​​کی موت سے کوئی ہمدردی نہیں ہے، کوئی ہمدردی نہیں ہے تو مجھے اس سے بھی کوئی پریشانی نہیں ہے. پہلو خان ​​کے بچوں کے تئیں کوئی افسوس نہیں ہے تو کوئی بات نہیں . لیکن ان لوگوں کے تئیں آپ کو فکر مند ہوں گے ہی. یہ جو مار رہے ہیں . ناراض ہو سکتا ہے ان کا بھی خود پر بس نہ چلا ہو. مرنے والا تو ایک ہی ہے، مگر مارنے والے دو چار ہوں تو کیا یہ تشویش کی بات نہیں ہے. بھیڑ میں کسی کے ہاتھ خون سے رنگ جائیں، کوئی حادثہ ہو جائے تو کیا آپ ان لوگوں کے تئیں بھی فکر مند نہیں ہوں گے، کیا آپ ہمدردی ان گئو رکشک سے بھی نہیں ہے. ہم ویڈیو کی تصدیق نہیں کر رہے ہیں، لیکن ایک سوال پوچھ رہے ہیں . بھیڑ میں کون ہے. ہمارے ہی لوگ تو ہیں نہ. اگر ان سر خون کا الزام آتا ہے تو کیا یہ اچھی بات ہے. فرض کریں کہ کسی اور واقعہ میں ایسی ہی کوئی بھیڑ سے قتل ہو جاتا ہے، یہاں تک کہ اگر پولیس اور سیاست انہیں بچا لے لیکن کیا آپ انہیں اپنے درمیان قبول کر پائیں گے. کیا گئو رکشا کے نام پر بن رہی بھیڑ کے ساتھ کھڑے لوگ اس بات کو لے کر فکر مند ہیں کہ ایسا واقعہ کے بعد ان کے مستقبل پر کیا اثر پڑے گا. یہ سب نوجوان لڑکے ہیں. مجھے پورا یقین ہے کہ انہیں راتوں کو نیند نہیں آئے گی. قتل کا گناہ کبھی نہ کبھی زندگی میں لوٹ کر آتا ہے. پریشان کرتا ہے. اس لئے ہمیں تشدد بھیڑ کے تئیں ہمدردی تو رکھنی چاہیے. اس ہجوم میں ہمارے ہی درمیان کوئی ہے. جوش اور جذبہ میں ٹوکا ٹوكي، کھسیاہٹ تک تو ٹھیک ہے، لیکن اس سے آگے جاکر کسی کو اتار کر مارنا، پیٹنا اور ایسی صورت حال پیدا کر دینا کہ موت ہی ہو جائے، میرے خیال سے آپ میری اس بات سے اتفاق کریں گے کہ ایسا نہیں ہونا چاہئے. ہم سب کو اس بھیڑ کی مخالفت کرنی چاہیے۔ کیونکہ اس طرح قانون اپنے ہاتھ میں لینے سے کوئی قاتل بن سکتا ہے. سیاسی پارٹیاں ایسے ہی لوگوں کا استعمال کرتی ہیں. انہیں بہادر کہیں گے، جاںباز کہیں گے۔ پھر جب گئو رکشا کا ٹوپک سیاسی طور پر کمزور پڑے گا تو انہیں چھوڑ دیں گے. ان نوجوانوں کی زندگی برباد ہو جائے گی. ہاں اگر انہیں گائے کی خدمت کرنی ہے تو بالکل ان نوجوانوں کا ساتھ دینا چاہئے. ان کا حوصلہ بڑھانا چاہئے. وہ سروس کو وزیر اعظم نے ان کے لئے کہی ہے. وزیر اعظم نے کہا تھا، 'میں ان سے درخواست کرتا ہوں ایک کام کیجیے سب سے زیادہ گائیں قتل کی وجہ مرتی نہیں ہیں، پلاسٹک کھانے سے مرتی ہیں. اب یہ لوگ جو سماج میں خدمت کرنا چاہتے ہیں، کم از کم گائے کو پلاسٹک کھانا بند کروا دیں اور پلاسٹک لوگوں کا پھینکنا بند کروا دیں تو بھی بہت بڑی گو سروس ہوگی. ' چند ماہ کی عمر اس بات کے تناظر میں ہی میں نے اپنی بات کہی ہے. اب یہ طے آپ کو کرنا ہے، آپ کے عزیز وزیر اعظم کی بات صحیح ہے، میری بات صحیح ہے یا اس بھیڑ کی بات صحیح ہے. ایک بار آپ یہ طے کر لیں گے تو مجھے یقین ہے کہ آپ پہلو خان ​​کی موت پر شرمندہ ہوں گے. جو بھی مذمت کرنے آئے گا وہ اگر مگر کا سہارا لے کر اس بھیڑ کے ساتھ کھڑا نہیں ہو سکے گا. الور کے ایس پی راہل پرکاش نے کہا ہے کہ گئو اسمگلر تھے یا نہیں تھے، اس سے مار پیٹ کرنے والوں کا دوش کم نہیں ہوتا ہے. جن لوگوں نے مارپیٹ کی ہے وہ 302 کے تحت ہمارے لئے ملزم ہیں. یہ ایس پی کا بیان ہے. کیا آپ گئو رکشا کے نام پر نوجوانوں کی ٹولی کو 302 یعنی قتل کا ملزم بنانے کی حمایت کر سکتے ہیں. کیا آپ کو نہیں لگتا ہے کہ کوئی ان کی زندگی سے کھیل رہا ہے.

مسلمانوں نے ناکام بنادی مودی سرکار کی سازش :پہلو خان ​​کو جس گاڑی سے اتار کر دوڑایا گیا اسے ارجن نام کا ڈرائیور چلا رہا تھا. کہا جا رہا ہے کہ ہجوم نے اس کا نام پوچھ کر چھوڑ دیا. اب اگر گائے کی اسمگلنگ جرم ہے تو کیا ارجن کے لئے نہیں ہے. کیا ارجن کو گائے کی اسمگلنگ کی چھوٹ ہے؟ کم سے کم ارجن سے پوچھ گچھ تو ہونی ہی چاہئے. ٹھیک ہے کہ اسے پہلو خان ​​نے کرائے سے لیا تھا لیکن جے پور سے جب وہ چھوٹا ٹرک لے کر چلا تھا تب تو گائے نظر آئی ہی ہو گی. پہلو خان ​​کے ساتھ اس کے دو بیٹے ارشاد اور عارف بھی گئے تھے. ٹی وی پر کس طرح کہا جائے پر گائے مسلمان بھی پالتے ہیں. مسلمان بھی گائے کے دودھ بیچ کر گزارا کرتے ہیں. اس طرح شک کی بنیاد پر کسی کو دوڑا کر مار دیا جائے تو کیا پتہ کسی دن آپ کو کسی گائے کے آگے چل رہے ہوں، کچھ کھانا کھلانے رہے ہوں اور بھیڑ آکر مار دے، کچھ بھی کہہ دے، کہہ دے گی کہ گائے کو کہیں اور لے جا رہے تھا، کچھ مشتبہ چیز پلا رہا تھا. جن پر مارپیٹ کے الزام ہیں ان کو پکڑنے کے لئے پولیس نے تین مخصوص ٹیم بنائی ہیں. ملزمان کو پکڑنے کے لئے پانچ پانچ ہزار کا انعام رکھا گیا ہے. ویڈیو اور تصاویر کی بنیاد پر پولیس نے تین افراد کو گرفتار کیا ہے. لیکن ایس پی راہل پرکاش نے جو بات کہی کہ ریاست سے باہر لے جانے کے لئے کلکٹر سے پرمٹ لینا ہوتا ہے یہ اہم ہے. ہو سکتا ہے انہیں اس کی معلومات نہ ہو. صرف اس پرمٹ کے نہ ہونے سے کیا کسی کو گئو اسمگلر قرار دیا جا سکتا ہے، جبکہ خریدار میونسپل میلے سے خرید رہا ہے، اس کی پرچی لے کر آ رہا ہے. NDTV کی رپورٹر هرشا کماری سنگھ نے اس کے لئے کئی افسران سے بات کرنے کی کوشش کی. کوئی کیمرے پر نہیں آیا اور نہ ہی بتا سکا کہ ہفتہ کو کتنے لوگوں کو پرمٹ دیا گیا، اگر ایسا قانون ہے جیسا کہ ایس پی صاحب کہہ رہے ہیں تو اس کے لئے میلے میں کیا انتظام کیا گیا. ہر جگہ آف دی ریکارڈ جواب ہی ملا. لیکن جے پور کے میئر اشوک لاهوٹي نے کیمرے پر جواب دیا. یہ سب جانچ کا موضوع ہے. ایس پی نے کہا کہ اس سے کسی کا جرم کم نہیں ہو جاتا کہ کوئی گئو اسمگلر تھا یا نہیں. ویسے بھی پہلو خان ​​کے مارے جانے سے پہلے 11 لوگوں کو اسمگلنگ کے الزام میں پکڑا گیا ہے۔ مترجم: محمد اسعد فلاحی۔ بشکریہ مضامین ڈاٹ کام

The short URL of the present article is: http://harpal.in/fT9bd

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے کھیتوں ک* نشان لگا دیا گیا ہے