Breaking News
Home / Uncategorized / گجرات کا نیا روپ سڑکوں پر اترا دلت آندولن

گجرات کا نیا روپ سڑکوں پر اترا دلت آندولن

روش کمارGujrat

گجرات کے اونا شہر کی یہ تصویر آنکھوں سے زیادہ دل کو چبھتی ہے. ایک سماج کے ناطے ہم سب کو سوچنا چاہئے کہ لاٹھی لے کر مار رہے نوجوانوں کے ذہن میں اس تشدد کو کس نے بھرا ہوا ہے. خاندان، سماج، مذہبی کتاب، رسم یا سیاسی نظریات نے. جن لوگوں نے گئو رچھک کے نام پر لاٹھی اٹھائی وہ نفرت اور بے رحمی کے کس اسکول کے پاس آؤٹ ہیں. ان کے ایک کرتوت سے ہندوستان کی ترقی کی تمام بلندياں کھوکھلی ہو جاتی ہیں.

جس گاڑی سے دلت نوجوانوں کو باندھا گیا وہ زائیلو ہے. مہندرا کا اسپورٹس يوٹلٹی وہیکل ایس یو وی. ہماری جدت اور ترقی کی آئینہ دار اس ایس یو وی کی قیمت ساڑھے آٹھ سے دس لاکھ کے درمیان ہے. جدیدیت کی پیٹھ سے چار دلت نوجوانوں کو باندھ دیا گیا ہے. انہیں جس نفرت سے مارا جا رہا ہے وہ نہ جانے کب سے ہمارے سماج میں ہے. یہ ماڈرن کار نہیں تھی تب بھی یہ نفرت تھی اور اس کار کے آنے کے بعد بھی وہی نفرت ہو بہ ہو ہے. یہ نوجوان گجرات کے ہیں مگر یہ کہیں کے بھی ہو سکتے ہیں. بلکہ سارے واقعات میں ایسے نوجوان ملے ہیں جو دلتوں کے خلاف تشدد میں شامل رہے ہیں. ان کے ہاتھ میں المونیم کی لاٹھی بتاتی ہے کہ ان کی کوئی نہ کوئی منظم شکل رہی ہوگی. کسی کو معلوم کرنا چاہئے کہ یہ کہاں سے پیسہ پاتے ہیں کہ ساڑھے آٹھ لاکھ کی زائیلو پر چلتے ہیں، اس سے دلت نوجوانوں کو باندھ کر مارتے ہیں. مار پیٹ میں شامل 8 افراد کو گرفتار کر لیا گیا ہے، 6 پولیس والوں کو معطل کر دیا گیا ہے، کیس کی سماعت کے لئے خصوصی عدالت کا قیام کرنے کی بات ہو رہی ہے، لیکن یہ بھی جاننا ضروری ہے کہ ایسے لوگوں کے پاس اتنے وسائل کہاں سے آتے ہیں. یہ کس سے جڑے ہیں کہ ان کے پاس دس سے پندرہ لوگوں کا گینگ جمع ہو جاتا ہے، کسی کو قانون ہاتھ میں لے کر مارنے کے لئے. اونا سے 50 کلومیٹر دور 22 مئی کو بھی ایسا ہی واقعہ ہوا لیکن اس معاملے میں کچھ خاص نہیں ہوا. دلتوں کو مارا پیٹا گیا اور ویڈیو بنایا گیا تھا.

واقعہ اپنے آپ میں جتنا شرمناک ہے اتنا ہی دلیرانہ ہے، اس واقعہ کی مخالفت. گائے کا معاملہ آتے ہی اچھی اچھی سیاسی جماعتوں کی زبان کانپنے لگتی تھی، مگر گجرات کے دلتوں نے جو کیا اس سے یہ واقعہ اور بھی بڑا اور تاریخی ہو جاتا ہے. دلت سماج نے ٹرکوں پر مردہ گایوں کو لادا اور سریندرنگر کے کلیکٹر کے دفتر میں جا کر چھوڑ آئے کہ ہم دفن نہیں کریں گے. گائے جن کی ماں لگتی ہے وہ کریں گے. یہ اور بات ہے ڈاکٹر امبیڈکر نے یہ کام چھوڑ دینے کی بات دہائیوں پہلے کی تھی. پھر بھی حال فی الحال دہائیوں میں پورے ہندوستان میں کہیں بھی گئو رچھکوں کی بے رحمی کا ایسا ردعمل نہیں ہوا تھا. شاید اسی لیے گئو رچھکوں کا حوصلہ اتنا بڑھ گیا کہ ان نوجوانوں کو مارنے پیٹنے کے بعد سب نے انہیں نیچے بٹھا کر تصویر بھی کھنچائی. یہ تصویر تھانہ کی ہے. دلت نوجوان تھانہ کے احاطے میں ہاتھ جوڑے کھڑے ہیں. پیچھے نیلے رنگ سے تھانہ لکھا ہے. آپ تصور کیجئے کہ ان نوجوانوں کو مایوسی اور بے بسی کی کس صورت حال سے گزرنا پڑا ہوگا. دو سال کے دوران ایسے واقعات کئی جگہوں سے آ رہے تھے. بیف کی خریدو فروخت کے الزام میں ہریانہ میں دو نوجوانوں کو گوبر، گئو پیشاب، دودھ دہی، گھی کا مرکب پنچگئو کھلایا گیا. اس کا ویڈیو بنا کر وائرل کیا گیا. دونوں نوجوان مسلم تھے. جھارکھنڈ میں بھی دو مسلم نوجوانوں کو مبینہ طور پر شک کی بنیاد پر قتل کر دیا گیا کہ گائے کی خرید وفروخت کر رہا تھا. مخالفت ہو رہی تھی مگر ہمارے لیڈر بھی گائے کے نام پر سماج سے بات چیت کرنے سے ڈر رہے تھے.

انہیں لگ رہا تھا کہ گائے کو لے کر دوسری دلیل ہی نہیں موجود ہے. لوگ ناراض ہو جائیں گے. ایسا کرتے وقت وہ صرف ایک قسم کے لوگوں کا تصور کر رہے تھے. ان کے تخیل میں دور دور تک گجرات کے دلتوں کا یہ جواب تھا ہی نہیں، یہاں کے دلت اراکین پارلیمنٹ اور رہنماؤں کے پاس بھی جواب نہیں تھا. وہ بھی خاموش تھے. 5 مارچ 2016 کی رات ہریانہ کے شاه آباد کے نزدیک گئو رچھک دل کے ارکان نے مبینہ طور پر جانوروں کے ایک تاجر کو پکڑ لیا. بعد میں اس کی لاش برآمد ہوئی تھی. اس معاملے کی سماعت کرتے ہوئے 10 مئی 2016 کے دن پنجاب اور ہریانہ ہائی کورٹ نے کہا تھا کہ سیاسی رہنما اور ریاستی حکومت کے سینئر حکام جن میں پولیس بھی شامل ہیں، ان کی مدد سے نام نہاد خود ساختہ گئو رچھک دل بن جاتے ہیں اور قانون اپنے ہاتھوں میں لے لیتے ہیں. کورٹ کے نوٹس میں ایسی باتیں آئی ہیں کہ یہ دل قانون توڑتے ہیں اور اپنے جانوروں کے ساتھ گلہ بانی کے لئے جا رہے غریب لوگوں سے وصولی بھی کرتے ہیں. ان سے پولیس بھی ملی ہوتی ہے.

اب کچھ باتیں گائے اور گئو شالاوں کی. ہمارے ملک میں کچھ بہت ہی اچھی گئو شالائیں ہیں. انہیں آپ چھوڑ دیں یا ان کے باوجود تمام شہروں میں گائیں کچرے کے ڈھیر میں پلاسٹک کی تھیلی کھانے کے لئے مجبور ہیں. اس حالت میں کوئی سدھار نہیں ہوا ہے. پنچایتوں میں گئو چر کی زمین پر جن لوگوں نے قبضہ کیا ہے اس کی فہرست بنائیں گے تو ساری سیاسی پارٹیاں اس بحث سے چھٹی لے لیں گی. زیادہ دودھ کے لئے گائے کو جو انجکشن دیا جاتا ہے وہ کتنا تکلیف دہ ہے. پھر بھی گئو رچھکوں کی سرگرمیوں کے واقعات کوئی بہت بڑی تعداد میں نہیں ہوئے ہیں. مگر ان سے جو دہشت کا ماحول پھیلا ہوا ہے اس کا اثر تعداد سے زیادہ ہے. ایک خاص طبقے میں عدم تحفظ پھیل گیا. لوگوں کو لگا کہ کب کون سے گوشت کو کیا سمجھ لیا جائے گا. جب تک ہندو بمقابلہ مسلم کا اینگل تھا زیادہ تر خاموشی تھی، مگر دلتوں نے اس خاموشی کو بدل دیا ہے. گجرات میں گزشتہ تین دنوں میں کئی جگہوں پر مظاہرے ہوئے ہیں. امریلی، جونا گڑھ، راجکوٹ، گھوراجی، پوربندر، بھاونگر، احمد آباد سمیت کئی جگہوں پر چکا جام سے لے کر، بسوں پر پتھراؤ کرنے اور توڑ پھوڑ کے واقعات ہوئے ہیں. موروی ضلع میں 200 دلتوں نے بندوق لائسنس کی درخواست دے دی. پیر کو گونڈل میں پانچ دلت نوجوانوں نے زہر پی کر خودکشی کی کوشش کی. جونا گڑھ میں تین نوجوانوں نے زہر پی لیا جن میں سے ایک کی موت ہو گئی.

مایاوتی سے لے کر سب نے اپیل کی ہے کہ زہر پینے کا واقعہ نہ دہرایا جائے. یہ اپیل ہم بھی کرتے ہیں. تشدد کا راستہ ٹھیک نہیں ہے. وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے کہا ہے کہ وزیر اعظم بھی اس واقعہ پر دکھی ہیں. وزیر اعلی آننديبین نے 18 جولائی کو ہی ٹویٹ کیا تھا کہ 60 دنوں کے اندر چارج شیٹ دائر کر دیئے جائیں گے. جانچ کا کام سی آئی ڈی کے حوالے کر دیا گیا ہے. ریاستی حکومت نے متاثرین کو ہر طرح کی مدد کی یقین دہانی کرا دی تھی. واقعہ کے 9 دن بعد ریاست کی وزیر اعلی اونا گئیں اور متاثرین کے خاندانوں سے ملاقات کی ہے. وہاں انہیں کالا جھنڈا بھی دکھایا گیا.

حکومت، پارٹی اور راشٹریہ سويم سیوك سنگھ کو بھی لگا کہ اس بار کی ناراضگی کچھ اور ہے. انڈین ایکسپریس میں آر ایس ایس کے گجرات پرانت کے سنگھ چالک مکیش ملكن کا بیان چھپا ہے کہ یہ ہندو سماج پر حملہ ہے جو بھائی چارے اور امن پر یقین رکھتا ہے. گئو رچھا کے نام پر دلت بھائیوں کے خلاف ظلم کا واقعہ بہت ہی دردناک اور قابل مذمت ہے. اس طرح کا غیر انسانی رویہ ایک بھیانک جرم ہے اور ایسا کرنے والوں کو چھوڑا نہیں جانا چاہئے. اگر مکیش جی کا یہ بیان صحیح سے چھپا ہے تو دلچسپ ہے. انہیں غیر اعلانیہ طور پرسیاسی منظوری حاصل ہے. مکیش ملكن نے اونا کے واقعہ کو ہندو سماج پر حملہ قرار دیا ہے. جب وزیر اعلی آننديبین اونا گئیں تو ان کے ساتھ ساتھ گاؤں والوں نے جو کہا اس پر صرف گجرات ہی نہیں بلکہ ہر ریاست کو اپنے اپنے یہاں چیک کروانا چاہیے.

11 جولائی کے واقعہ کی گونج 19 اور 20 جولائی کو پارلیمنٹ میں بھی سنائی دی. 9 دن لگ گئے حزب اختلاف کے اراکین پارلیمنٹ کو سمجھنے میں کہ گجرات کے دلتوں کے درمیان اتنا غصہ ہے. حکومت اور اپوزیشن کے درمیان خوب تکرار ہوئی. اب آتے ہیں کہ ہم اس پر پرائم ٹائم کیوں کر رہے ہیں. بغیر کسی عوامی تنظیم کے گجرات بھر میں دلتوں کا غصہ سڑکوں پر کس طرح چھلكا، کیا گجرات میں دلت جارحیت کا کوئی نیا دور ہے. اس کے لئے ہمارے ساتھ احمد آباد سے دلت سیاست کو سمجھنے والے ہیں. اب دوسرا سوال یہ ہے کہ کیا گئو رچھا کے نام پر ہو رہے بوالوں پر کھل کر بات کر سکتے ہیں. کیا یہ شبیہ صحیح ہے کہ سماج اس مسئلے پر ایک ہی طرح سے سوچتا ہے یا سوچنا ہی پڑے گا.

اس بات پر بحث کے لئے ہمارے ساتھ پونہ سے وجے دیوان صاحب ہیں. ممبئی سے سو کلومیٹر دور گگوڑا گاؤں میں یہ آشرم ہے. ونوبا بھاوے کا گاؤں. یہ آشرم ونوبا آشرم ہی ہے. وجے دیوان کی کوئی ذات نہیں ہے، مذہب نہیں ہے. والدین برہمن تھے. 1982 میں 25 سال کی عمر میں وجے دیوان کھال اتارنے کا کام کرنے کے لئے یہاں آ گئے. اس کے بعد سے مردہ جانوروں کی کھال اتارتے ہیں. اس کام میں کسی کا ساتھ نہیں ملتا، کوئی سواری نہیں ملتی، لہذا کھال اتارنے کے بعد اپنی پیٹھ پر لاد کر لاتے ہیں. صدیوں سے دلتوں نے جس کام کے لئے دکھ سہا، زہر پیا، اس دکھ کو اپنی پیٹھ پر لاد کر لاتے ہیں، جس کام کے لئے اونا کے دلتوں کی پیٹھ پر اليمونيم کی لاٹھی برسائی گئی. میری نظر میں وجے دیوان سے بہتر کوئی دوسرا نہیں ہو گا اس مسئلے پر بات کرنے کے لئے. ان کے تجربے آپ کو اس مسئلے پر نئے طریقوں سے سوچنے کے لئے مہمیز کر سکتے ہیں.

The short URL of the present article is: http://harpal.in/NUlfy

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے کھیتوں ک* نشان لگا دیا گیا ہے