Breaking News
Home / کھیل کھلاڑی / ہندوستان بمقابلہ آسٹریلیا: معمولی سبقت کے بعد ہندستانی اننگ 332 رنوں پر ڈھیر

ہندوستان بمقابلہ آسٹریلیا: معمولی سبقت کے بعد ہندستانی اننگ 332 رنوں پر ڈھیر

دھرم شالہ(ایجنسی)27مارچ:رویندر جڈیجہ (63) اور رددھمان ساہا (31) نے ساتویں وکٹ کے لیے 96 رنوں کی اہم شراکت کی بدولت ہندستان کو آسٹریلیا کے خلاف چوتھے اور آخری ٹیسٹ کے تیسرے دن پیر کو لنچ تک 32 رنوں کی سبقت دلا دی۔ ہندستان نے اپنی اننگز کی شروعات کل 248 رن پر چھ وکٹ سے آگے کی تھی اور صبح کے سیشن میں اس نے اپنے ا سکور میں 84 رنوں کا اضافہ کیا اور لنچ تک اس کی پہلی اننگز 118.1 اوور میں 332 کے اسکور پر سمٹ گئی۔ میزبان ٹیم کو ابھی 32 رنوں کی سبقت حاصل ہے۔ آسٹریلیا کے لیے اسپنر ناتھن لیون نے 92 رن پر سب سے زیادہ پانچ وکٹ نکالے اور ہندستان کو بڑے اسکور سے روک دیا۔ صبح کل کے ناٹ آؤٹ بلے بازوں ساہا نے 10 رن اور جڈیجہ نے 16 رن سے اننگز کو آگے بڑھاتے ہوئے 30 اوور میں ساتویں وکٹ کے لیے 96 رنوں کی اہم شراکت کرتے ہوئے ہندوستان کو برتری دلائی۔ زبردست لیفٹ آرم اسپنر جڈیجہ نچلے آرڈر پر ہندوستان کے لیے اہم ثابت ہوئے اور انہوں نے 95 گیندوں میں چار چوکوں اور چار چھکے لگا کر 63 رن بنائے۔ ساہا نے 102 گیندوں پر دو چوکے لگا کر 31 رن بنائے۔

ساہا اور جڈیجہ نے تحمل سے بلے بازی کرتے ہوئے ہندوستان کو 300 کے پار پہنچایا لیکن پھر 113 ویں اوور کی پہلی ہی گیند پر پیٹ کمنز نے جڈیجہ کو بولڈ کرکے اس شراکت داری پر بریک لگا دیا اور آسٹریلیا نے اپنی پہلی کامیابی حاصل کر لی۔ اس کے بعد ہندستان نے جلدی جلدی وکٹ گنوائے اور محض 15 رنوں کے فرق پر اس کے چار وکٹ گر گئے۔ ہندستانی ٹیم نے اوپنروں کی مطئمن بخش کارکردگی کے بعد میچ کے دوسرے دن چھ وکٹ پر 248 رن جوڑ لئے تھے اور آٹھویں نمبر پر بلے بازی کر رہے آل راؤنڈر جڈیجہ نے ساہا کے ساتھ مل کر نصف سنچری شراکت کرتے ہوئے ہندوستان کی امیدوں کو برقرار رکھا۔ جڈیجہ نے 83 گیندوں میں اپنے 50 رن مکمل کر کے ٹیسٹ میں ساتویں نصف سنچری بنائی۔اسی کے ساتھ آئی سی سی ٹیسٹ رینکنگ میں دنیا کے نمبر ایک بولر جڈیجا تیسرے ایسے آل راؤنڈر بھی بن گئے ہیں جنہوں نے ایک سیزن میں 50 سے زائد وکٹ لینے کے علاوہ 500 سے زائد کا اسکور بھی بنایا ہے۔ جڈیجہ نے رواں سیشن17-2016 میں یہ کامیابی حاصل کی ہے اور ان سے پہلے اس معاملے میں کپِل دیو (1979-80) اور مشیل جانسن (2008-09) ہی آگے ہیں۔

تاہم فاسٹ بولر کمنز نے صبح تقریباً 21 اوور کے کھیل کے بعد جا کر آسٹریلیا کو پہلی اور اہم کامیابی دلائی جب ان کی ایک فُل لینتھ گیند کو سمجھنے میں جڈیجہ غلطی کر بیٹھے اور گیند بلے کا اندرونی کنارہ لیتے ہوئے براہ راست اسٹمپس سے ٹکراگئی۔ ہندستان کا ساتواں وکٹ 317 کے اسکور پر گرا۔ جڈیجہ کے آؤٹ ہوتے ہی پھر باقی ہندستانی بلے بازوں کو واپس پویلین بھیجنے میں زیادہ وقت نہیں لگا اور بھونیشور کمار کھاتہ کھولے بغیر ہی اسٹیو او كیفے کی گیند پر کپتان اسٹیون سمتھ کو کیچ دے بیٹھے. اس کے بعد 318 کے اسی اسکور پر ساہا نے بھی اپنا وکٹ گنوادیا اور کمنز نے ہی انہیں اسمتھ کے ہاتھوں کیچ کراکر ہندستان کا نواں وکٹ حاصل کر لیا۔کلدیپ یادو نے 17 گیندوں میں ایک چوکا لگا کر سات رن بنائے اور لیون نے انہیں جوش ہیزل ووڈ کے ہاتھوں کیچ کراکر ہندستان کی اننگز سمیٹ دی اور ساتھ ہی اننگز میں اپنے پانچ وکٹ بھی پورے کر لیے۔ امیش یادو دو رن پر ناٹ آؤٹ لوٹے۔ کمنز نے 94 رن پر تین وکٹ حاصل کئے جبکہ لیون نے 92 رن دے کر ہندستان کے سب سے زیادہ پانچ وکٹ حاصل کئے. لیون کے لئے یہ نواں موقع ہے جب ٹیسٹ کی ایک اننگز میں انہوں نے پانچ وکٹ حاصل کئے ہیں۔ ہیزل اور كيفے کو ایک ایک وکٹ ملی۔

The short URL of the present article is: http://harpal.in/uOYIo

Check Also

مرلی اور کوہلی کی سنچریوں سے ہندوستان کی پوزیشن مضبوط

Share this on WhatsApp پہلی اننگز میں51رن کی برتری، مہمان ٹیم کے لئے معین علی …

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے کھیتوں ک* نشان لگا دیا گیا ہے