Breaking News
Home / اہم ترین / اترپردیش میں اتحاد کا اعلان: ایس پی۔ بی ایس پی 38-38 سیٹوں پر لڑیں گی الیکشن

اترپردیش میں اتحاد کا اعلان: ایس پی۔ بی ایس پی 38-38 سیٹوں پر لڑیں گی الیکشن

لکھنؤ( ہرپل نیوز،ایجنسی)12جنوری:دوہزار انیس کے عام انتخابات میں اب محض تین ماہ کا وقت ہی بچا ہے ۔ ایسے میں تمام سیاسی پارٹیاں اپنی راہ ہموار کرنے میں لگی ہیں۔ اسی ضمن میں آج اترپردیش میں سماجوادی پارٹی اور بہوجن سماج پارٹی کے درمیان اتحاد کا اعلان ہوا۔ ایس پی سربراہ اکھلیش یادو اور بی ایس پی صدر مایاوتی نے آج اس سلسلہ میں لکھنئو میں مشترکہ پریس کانفرنس کر اتحاد کا اعلان کر دیا۔پریس کانفرنس سے خطاب میں بی ایس پی صدر مایاوتی نے کہا کہ ضمنی الیکشن میں کانگریس کی ضمانت ضبط ہو گئی تھی۔ ہم بی جے پی کو اقتدار میں واپس آنے سے روکیں گے۔ ایس پی۔ بی ایس پی اتحاد اترپردیش میں بی جے پی کو شکست دے گا۔ مایاوتی نے کہا کہ میں آپ کو بتا دوں کہ آزادی کے بعد کانگریس ایک طویل عرصہ تک مرکز اور ریاستوں کے اقتدار پر قابض رہی۔ تب بھی بدعنوانی اور غریبی مسلسل بڑھتی رہی۔ مرکز میں بی جے پی رہے یا کانگریس ایک ہی جیسے حالات ہوتے ہیں۔

مایاوتی نے کہا کہ ہم گزری باتیں بھلا کر ساتھ آئے ہیں۔ ایس پی۔ بی ایس پی کے اتحاد نے عوام کو ایک نئی امید دی ہے۔ ہم پسماندہ لوگوں، غریبوں اور اقلیتوں کی طاقت بنیں گے۔ بی جے پی نے عوام کو دھوکہ دے کر مرکز اور ریاست میں حکومت بنائی ہے۔ ہم نے بی جے پی کو پہلے ہی ضمنی الیکشن میں ہرا دیا ہے۔ مایاوتی نے اتحاد میں کانگریس کو شامل نہیں کرنے کے معاملہ پر کہا کہ پچھلے کاموں کو لے کر کانگریس کے ساتھ گٹھ بندھن نہیں کیا ہے۔مایاوتی نے کہا کہ ایس پی اور بی ایس پی دونوں ریاست میں 38-38 سیٹوں پر الیکشن لڑیں گی۔ لوک سبھا کی دو سیٹیں دیگر پارٹیوں کے لئے چھوڑ دی گئی ہیں۔ مایاوتی نے کہا کہ رائے بریلی اور امیٹھی کی سیٹیں کانگریس کے لئے چھوڑ دی گئی ہیں۔

وہیں، پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے اکھلیش یادو نے کہا کہ بی جے پی کے تکبر کو شکست دینے کے لئے بی ایس پی اور ایس پی کا ساتھ آنا ضروری تھا۔ بی جے پی ہمارے کارکنوں میں اختلاف پیدا کرنے کے لئے کسی بھی حد تک جا سکتی ہے۔ ہمیں متحد ہونا ہو گا اور ایسی کسی بھی حکمت عملی کا مقابلہ کرنا ہو گا۔

سماجوادی پارٹی صدر اکھلیش یادو سے جب یہ پوچھا گیا کہ کیا وہ وزیراعظم عہدہ کے لئے مایاوتی کی حمایت کریں گے؟ اس پر انہوں نے کہا کہ آپ میری پسند جانتے ہیں۔ اترپردیش سے ملک کے کئی وزیر اعظم بنے ہیں اور ہم اسے پھر سے دہرانے جا رہے ہیں۔

The short URL of the present article is: http://harpal.in/F7SD7

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے کھیتوں ک* نشان لگا دیا گیا ہے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.