Home / اہم ترین / اجیت پوار اور سنجے راوت نے کہا- مہاراشٹر کی توہین برداشت نہیں کی جائے گی

اجیت پوار اور سنجے راوت نے کہا- مہاراشٹر کی توہین برداشت نہیں کی جائے گی

ممبئی:(ہرپل نیوز؍ایجنسی)24؍نومبر: کرناٹک کے وزیر اعلی بسوراج بومئی کے جمعرات کو جاری کردہ بیان پر مہاراشٹر کی سیاست گرم ہو گئی ہے۔ اس بیان پر قانون ساز اسمبلی میں قائد حزب اختلاف اجیت پوار اور شیو سینا (ادھو بالا صاحب ٹھاکرے) کے رہنما اور راجیہ سبھا کے رکن سنجے راوت نے کہا ہے کہ مہاراشٹر کی توہین کسی بھی قیمت پر برداشت نہیں کی جائے گی۔

اجیت پوار نے صحافیوں کو بتایا کہ سانگلی ضلع کی جاٹ تحصیل کے دیہات پر دعویٰ کرنے کے بعد اب کرناٹک کے وزیر اعلیٰ نے سولاپور ضلع کے اکل کوٹ پر بھی دعویٰ کیا ہے۔ کرناٹک کے وزیر اعلیٰ کو فوری طور پر ایسے بیانات دینا بند کر دینا چاہیے۔ ان کا یہ بیان قابل مذمت ہے۔ اجیت پوار نے کہا کہ مہنگائی اور بے روزگاری سے لوگوں کی توجہ ہٹانے کے لیے اس طرح کے بیانات دیے جا رہے ہیں۔ اب صرف ممبئی کی مانگ رہ گئی ہے۔ اجیت پوار نے کہا کہ مرکزی حکومت کو اس معاملے میں فوری مداخلت کرنی چاہیے۔ نیز، دونوں ریاستوں کو کرناٹک سرحدی تنازعہ کو حل کرنے کی مشترکہ کوشش کرنی چاہیے۔

سنجے راوت نے کرناٹک کے وزیر اعلی واسوراج بومئی کے جمعرات کو مہاراشٹر-کرناٹک سرحدی تنازعہ پر جاری بیان کی مذمت کی ہے۔ واسوراج بومئی نے آج اپنے ٹویٹ میں کہا ہے کہ سولاپور ضلع کے اکل کوٹ میں رہنے والے کنڑ بولنے والے اکثریتی گاؤں بھی کرناٹک میں شامل ہونا چاہتے ہیں۔ اس سے ایک دن پہلے کرناٹک کے وزیر اعلیٰ نے سانگلی ضلع کی جاٹ تحصیل کے 40 گاؤں پر قبضہ کرنے کی بات کی تھی۔

راؤت نے کہا کہ یہ ریاستی حکومت کی کمزوری ہے، جس کی وجہ سے جو چاہے بڑھ رہا ہے۔ راوت نے کہا کہ ریاست میں کمزور حکومت کی وجہ سے کوئی مہاراشٹر کی صنعت کو چھین رہا ہے اور کوئی اسے گاؤں میں لے جانے کی بات کر رہا ہے۔ لیکن ہم مہاراشٹر کے لیے لڑتے رہیں گے۔

The short URL of the present article is: http://harpal.in/RdyFP

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے خانے پر* نشان لگا دیا گیا ہے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.