Breaking News
Home / اہم ترین / ایودھیا معاملے میں سپریم کورٹ کی شنوائی 29جنوری تک ٹلی مسلم فریقوں کے وکیل نے بنچ کی تشکیل پر ہی اُٹھایا سوال

ایودھیا معاملے میں سپریم کورٹ کی شنوائی 29جنوری تک ٹلی مسلم فریقوں کے وکیل نے بنچ کی تشکیل پر ہی اُٹھایا سوال

 نئی دہلی( ہرپل نیوز،ایجنسی)10جنوری: آج سپریم کورٹ کی دستوری بنچ جس کی صدارت خود چیف جسٹس کر رہے تھے ،نے اجودھیا معاملے کی شنوائی کا آغاز کیاتو مسلم فریقوں   ( مسلم پرسنل لا بورڈ، جمعیت علما ہند) کے وکیل سینئر ایڈوکیٹ ڈاکٹر راجیو دھون نے دستوری  بنچ کی تشکیل پر ہی سوال کھڑا کر دیا۔ اس بات کی جانکاری آل انڈیا مسلم پرسنل لاء بورڈ کی جانب سے جاری کردہ پریس ریلیز میں دی گئی ہے۔

ریلیز کے مطابق ڈاکٹر دھون کی دلیل یہ تھی کہ عدالت عظمی کی ایک دیرینہ روایت یہ ہے کہ بنچ میں کوئی ایسا جج نہیں ہو سکتا جو کسی بھی معاملے میں اس کیس میں کسی پارٹی کی طرف سے بطور وکیل پیش ہوا ہو۔کیونکہ جسٹس یو للت 1997میں اجودھیا مسئلہ سے متعلق ایک کیس میں کلیان سنگھ کی طرف سے وکیل تھے ۔لہذا وہ اس بنچ کا حصہ کیسے ہو سکتے ہیں۔ اس پر جسٹس یو للت نے خود کو اس کیس سے الگ کر لیا اور چیف جسٹس نے یہ مانا کہ بنچ بنانے میں چوک ہوئی ہے ۔ لہذا فیصلہ دیا کہ بنچ دوبارہ بنائی جائے گی اور کیس سے متعلق تفصیلات طے کر نے کے لئے اگلی تاریخ 29جنوری ہوگی۔ اسی طرح چیف جسٹس نے اپنے فیصلہ میں یہ بھی کہا کہ چونکہ اس کیس میں 19ہزار صفحات کی دستاویزات پر پارٹیوں نے انحصار کیا ہے اور اس کا ترجمعہ خود کروایا ہے لہذا رجسٹری یہ دیکھے گی کہ ترجمہ درست ہے یا نہیں۔

آج کے فیصلے پر مسلم پرسنل لا بورڈ کے سیکریٹری مولانا محمد ولی رحمانی نے اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ کورٹ نے بنچ سے متعلق اپنے سہو کو تسلیم کرتے ہوئے اسے درست کرنے کا فیصلہ کرلیا یہ مناسب اور خوش آئند بات ہے۔   بابری مسجد کمیٹی کے  کنوینر ڈاکٹر سید قاسم رسول الیاس نے کہا کہ ہندو فریق خواہ مخواہ میڈیا کے ذریعہ یہ اشتعال پھیلا رہے ہیں کہ مسلم فریق کسی نہ کسی تکنیکی بنیاد پر مقدمہ کو طول دینے کی کوشش کر رہا ہے۔دراصل یہ افراد خود عدالت پر الزام تراشی کر رہے ہیں۔ حالانکہ ہم نے تو صرف ایک سہو کی طرف اشارہ کیا تھا جسے کورٹ نے تسلیم کر لیا۔مسلم فریقوں کی طرف سے تمام وکلا عدالت میں موجود تھے ۔یہاں تک کہ  ڈاکٹر راجیو دھون اپنی علالت اور پیرانہ سالی کے باوجود پوری تیاری کے ساتھ عدالت میں موجود تھے۔

The short URL of the present article is: http://harpal.in/wTJJ7

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے کھیتوں ک* نشان لگا دیا گیا ہے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.