Home / اہم ترین / بلڈوزر کی کارروائی قانونی: یوگی آدتیہ ناتھ حکومت کا سپریم کورٹ میں حلف نامہ۔ جمعیتہ پر جرمانہ عائد کرکے درخواست خارج کی جائے

بلڈوزر کی کارروائی قانونی: یوگی آدتیہ ناتھ حکومت کا سپریم کورٹ میں حلف نامہ۔ جمعیتہ پر جرمانہ عائد کرکے درخواست خارج کی جائے

نئی دہلی:(ہرپل نیوز؍ایجنسی)22؍جون:اترپردیش میں تشدد کے مبینہ ملزمان کی جائیدادوں کو بلڈوزر سے مسمار کرنے کے معاملے میں یوپی حکومت نے تخریب کاری کو قانونی قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ انہدام کی کارروائی قواعد کے مطابق کی گئی ہے۔سپریم کورٹ میں جمع کرائے گئے حلف نامہ میں کہا گیا ہے کہ مسماری غیر قانونی تعمیرات کے خلاف معمول کے عمل کا حصہ ہے۔ جمعیۃ علماء ہند تخریب کاری کو فسادات سے جوڑ رہی ہے، نوٹس بہت پہلے جاری ہوئے تھے۔یوپی حکومت نے کہا کہ مبینہ ملزمان کے خلاف الگ قانون کے تحت کارروائی کی جا رہی ہے۔

جمعیتہ پر جرمانہ عائد کرکے درخواست خارج کی جائے۔ الٰہ آباد میں جاوید محمد کے گھر کے خلاف کارروائی کافی موقع دے کر – اس کا فسادات سے کوئی تعلق نہیں ہے ،بلکہ قانون کے مطابق عمل کیا گیا۔یوپی حکومت کا الزام ہے کہ درخواست گزار جھوٹا الزام لگا رہے ہیں کہ ایک کمیونٹی کو نشانہ بنایا جا رہا ہے۔ متاثرہ فریقین میں سے کوئی بھی عدالت کے سامنے نہیں ہے۔ضابطے کے مطابق کارروائی کی گئی ہے۔ جمعیتہ علمائے ہند کی جانب سے یوپی حکومت پر لگائے گئے الزامات غلط اور بے بنیاد ہیں۔ حکومت نے کہا کہ اس معاملے میں کوئی متاثرہ فریق عدالت میں نہیں آیا۔

اس لیے جمعیۃ علماء ہند کی عرضی کو خارج کرنے کا ذور دیا گیا ہے۔اتر پردیش کے اسپیشل سکریٹری ہوم راکیش کمار مالپانی نے سپریم کورٹ میں ثبوتوں کے ساتھ 63 صفحات کا حلف نامہ داخل کیا ہے۔ بیان حلفی کے ساتھ جاوید احمد کے گھر پر سیاسی جماعت کا سائن بورڈ سمیت تمام چیزیں عدالت کو بھجوا دی گئی ہیں۔بیان حلفی میں کہا گیا ہے کہ غیر قانونی طور پر تعمیر شدہ املاک کو بلڈوزر کے ذریعے مسمار کیا گیا ہے۔

یہ عمل کافی عرصے سے جاری ہے۔ اس لیے یہ الزامات غلط ہیں کہ حکومت اور انتظامیہ تشدد کے ملزمان سے بدلہ لے رہی ہے۔ سپریم کورٹ نے 16 جون کو جمعیۃ علماء ہند کی جانب سے دائر درخواست پر اتر پردیش حکومت کو نوٹس جاری کرتے ہوئے اس سے جواب طلب کیا تھا۔ تب سپریم کورٹ نے کہا کہ تخریب کاری قانون کے مطابق ہونی چاہیے۔

The short URL of the present article is: http://harpal.in/4a9Ym

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے خانے پر* نشان لگا دیا گیا ہے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.