Home / اہم ترین / بہار میں سیلاب کا خطرہ برقرار، ندیوں کی سطح میں اضافہ

بہار میں سیلاب کا خطرہ برقرار، ندیوں کی سطح میں اضافہ

پٹنہ: (ہرپل نیوز؍ایجنسی) 23؍جون:۔ : بہار کے مختلف اضلاع میں ندیوں کی آبی سطح میں اضافہ اور غیر معمولی بارش سے سیلاب کا خطرہ ابھی ٹلا نہیں ہے ۔ منگل کو مسلسل بارش کے درمیان پٹنہ میں گنگا کی آبی سطح میں جس تیزی سے ا ضافہ ہواتھا ، اب اسی تیزی سے اس میں کمی ہونے لگی ہے۔ ریاست کی تقریباًتمام ندیوں میں اتار چڑھاؤ(مد و جزر ) جاری ہے۔ بھا گلپور تک گنگاکی آبی سطح میں اضافہ ہورہا ہے۔ منگل کو پٹنہ کے قریب میںواقع پن پن ندی کی آبی سطح میں معمولی اضافہ ہو ا ہے۔ اسی دوران کوسی ، باگمتی اور پرانی گنڈگ وغیرہ کی آبی سطح میں اضافہ ہوا ہے۔

سینٹرل واٹر کمیشن نے بتایا کہ منگل کو ۲۴؍ گھنٹے کے دوران سیتا مڑھی ، سمستی پور ، منیر( پٹنہ) اور حاجی پور( ویشالی) میں موسلادھار بارش ہوئی ہے۔ منگل کو سیتا مڑھی کے ڈھینگ میں ۱۲۰؍ ملی میٹر سے زیادہ بارش ہوئی ہے جبکہ رو سڑا میں ۱۰۷؍ ملی میٹر اور سمستی پور میں۸۸؍ ملی میٹر بارش ریکا رڈ کی گئی ہے۔ پٹنہ سے متصل منیر میں ۵۲؍ ملی میٹر جبکہ حاجی پور میں ۷۳؍ ملی میٹر بارش ہوئی ہے۔ اسی درمیان بھاگل پور میںگنگا کی آبی سطح میں ایک میٹر کا اضافہ ہوا ۔ اس کے باوجود اب بھی گنگا آبی سطح کے خطرے کے نشان سے ۲ء۷۵؍نیچے ہے۔ بوڑھی گنڈ ک ندی مظفر سے کھگڑیا تک خطرے کے نشان سے نیچے ہے ۔ کم وبیش یہی حال ادھوار ا ، کھرائی اور گھا گھر ا ندیوں کا ہے۔

ادھر کھگڑیا ضلع میں تیز بارش کے دوران کوسی ، باگمتی اور بوڑھی گنڈک ندی آنکھیں دکھا رہی ہیں۔ ان کی آبی سطح میں مسلسل اضافہ ہورہا ہے۔ کھگڑیا کے ڈی ایم ڈاکٹر آلوک رنجن گھوش نے کہا ہے کہ کوسی اورباگمتی کی سطح میں اضافہ کے پیش نظر الرٹ رہنے کا حکم دیا گیاہے ۔ ضلع انتظامیہ نے ضلع کے تمام ڈیموں اور پشتوں کو محفوظ قرار دیا ہے۔ ادھر سینٹرل واٹر کمیشن کوسی سب ڈویژن اور بیگوسرائے کی رپورٹ کے مطابق کوسی کی سطح میں مسلسل اضافہ کا امکان ہے۔ باگمتی کی سطح میں بھی مسلسل اضافہ ہورہا ہے۔اس سلسلےمیں فلڈ کنٹرول زون کھگڑیا کے سپرنٹنڈنٹ انجینئر نےبتایا کہ کوسی ، باگمتی اور بوڑھی گنڈک کی سطح میں اضافہ ہوا ہے۔ ضلع کے تمام ڈیم اور پشتےمحفوظ ہیںمستقل چوکسی برتی جارہی ہے۔ ۲۴؍ گھنٹے ڈیموں اور پشتوں پر نظر رکھی جارہی ہے۔ ادھرگزشتہ۴۸؍ گھنٹوں کے دوران کھگڑیا میں ۱۴۶ء۶۸؍ ملی میٹر بارش ہوئی ہے۔ جون کے مہینے میں اب تک ۳۳۲ء۳۴؍ ملی میٹر بارش ہوچکی ہے جبکہ جون کے مہینے میں اوسطاً بارش ۱۸۸ء۲۰؍ ملی میٹر ہوتی ہے۔ گزشتہ سال جون میں ۳۳۱ء۴۱؍ ملی میٹر بارش ہوئی تھی۔ امسال یہ ریکارڈ۲۱؍جون ہی کو ٹوٹ چکا ہےجس کے سبب نشیبی علاقوں میں رہنے والوں میں خوف ودہشت پیدا ہوگئی ہے۔ دریں اثناء جون ہی میں بوڑھی گنڈک کی سطح میں اضافہ ہوا ہے۔ عام طور پر جون میں کوسی اور باگمتی میں طغیانی ہوتی ہے لیکن اس سال اس مہینے میں بوڑھی گندک میں طغیانی حیرت انگیز ہے۔ ۲۱؍ جون ۲۰۲۰ءکوکھگڑیا میں بوڑھی گنڈک کی آبی سطح صرف ۳۰ء۲۰میٹر تھی۔ گزشتہ سال کے مقابلے میں امسال ۲۱؍جون کو بوڑھی گنڈک کی سطح۴؍ میٹر۵۴؍ سینٹی میٹر زیادہ ہے۔ فلڈ کنٹرول ڈویژن ایک کےایگزیکٹیو انجینئر امر سنگھ نے بتایا کہ سمستی پور اور روسڑا میں بوڑھی گنڈک کی سطح میں اضافہ ہورہاہے،اس لئے کھگڑیہ میں بھی پانی کی سطح میں اضافہ جاری ہے۔ بوڑھی گنڈک پر بنے تمام پشتے محفوظ ہیں۔

The short URL of the present article is: http://harpal.in/27pX9

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے خانے پر* نشان لگا دیا گیا ہے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.