Home / اہم ترین / سپریم کورٹ نے ’دی وائر‘ اور اس کے صحافیوں کو راحت دی

سپریم کورٹ نے ’دی وائر‘ اور اس کے صحافیوں کو راحت دی

نئی دہلی: (ہرپل نیوز؍ایجنسی)9؍ستمبر: دی وائر The Wire اور اس کے صحافیوں کو سپریم کورٹ سے راحت مل رہی ہے۔ سپریم کورٹ نے اتر پردیش کے غازی آباد اور بارہ بنکی میں درج ایف آئی آر کو منسوخ کرنے کی درخواست پر گرفتاری سے دو ماہ کے لیے عبوری تحفظ دیا ، حالانکہ سپریم کورٹ نے درخواست گزار سے کہا ہے کہ وہ اس معاملے کے بارے میں الہ آباد ہائی کورٹ سے رجوع کریں۔

سپریم کورٹ نے کہا کہ ہم نہیں چاہتے کہ پریس کی آزادی کو پامال کیا جائے۔ ہم آزادی اظہار رائے کے حق کی اہمیت کو سمجھتے ہیں۔ ہم نہیں چاہتے کہ پریس کا گلا گھونٹا جائے ، لیکن ہم ایف آئی آر کو منسوخ کرنے کے لیے صحافیوں کے لیے براہ راست اس عدالت میں آنے کا کوئی الگ راستہ نہیں بنا سکتے۔جسٹس ایل ناگیشور راؤ ، جسٹس بی آر گوائی اور جسٹس بی وی ناگراتھنا نے یہ حکم آزاد صحافت کی فاؤنڈیشن کی درخواست پر دیا۔

اس معاملے میں پٹیشن دائر کی گئی اور لونی اور بارہ بنکی میں درج ایف آئی آر کو منسوخ کرنے کا مطالبہ کیا گیا۔ آن لائن نیوز پلیٹ فارم ’دی وائر‘ اور لونی میں ایک مسلمان شخص پر حملے سے متعلق ٹویٹس کے لیے کئی دیگر کے خلاف مقدمہ درج ہونے کے چند دن بعد یوپی پولیس نے اسی نیوز پورٹل کے خلاف ایک دیگر مقدمہ درج کیا ہے۔ اس بار بارہ بنکی میں ایک کیس درج کیا گیا ہے۔

بارہ بنکی میں ایک مسجد کے انہدام سے متعلق ڈاکیومنٹری پر ایک ایف آئی آر درج کی گئی ہے۔ ایف آئی آر میں مسجد کو ’غیر قانونی ڈھانچہ‘ قرار دیا ہے اور نیوز ویب سائٹ پر’ دشمنی کو فروغ دینے‘ اور ’فسادات کی وجوہات کو فروغ دینے‘ کا الزام لگایا گیا ہے۔بارہ بنکی کے ریاستی افسر آدرش سنگھ نے ٹیوٹر پر ایک ویڈیوبیان میں کہا کہ نیوز پورٹل نے 23 جون کو اپنے ٹوئٹر ہینڈل پر ایک ویڈیو ڈاکیومنٹری شیئر کی جس میں بے بنیاد اور جھوٹی باتیں بتائی گئیں۔

The short URL of the present article is: http://harpal.in/1gEZU

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے خانے پر* نشان لگا دیا گیا ہے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.