Home / اہم ترین / سی بی آئی نے سنبھالی ہاتھرس معاملے کی جانچ کی ذمہ داری

سی بی آئی نے سنبھالی ہاتھرس معاملے کی جانچ کی ذمہ داری

نئی دہلی(ہرپل نیوز ،ایجنسی)11اکتوبر:مرکزی جانچ بیورو (سی بی آئی) نے اترپردیش کے ہاتھرس میں 19 سالہ لڑکی کے ساتھ مبینہ طور پر اجتماعی عصمت دری اور قتل کے معاملے میں اتوار کو مقدمہ درج کرکے باضابطہ طور پر جانچ کی ذمہ داری سنبھال لی ہے۔

سی بی آئی نے اترپردیش کے غازی آباد میں اس سلسلے میں تعزیرات ہند (آئی پی سی) کی مختلف دفعات کے تحت قل کی کوشش (دفعہ 307)، اجتماعی آبرو ریزی (376 ڈی)، قتل (دفعہ 302) اور درج فہرست ذات، درج فہرست قبائل (تشدد مخالف) قانون، 1989 کی دفعہ 3 (اذیت) کے تحت مقدمہ درج کیا ہے۔سی بی آئی نے اتر پردیش حکومت کی طرف سے جاری کردہ ایک سفارش اورمتعلقہ مرکزی حکومت کے اہلکار، عوامی شکایات اور پنشن کی وزارت کے تحت اہلکار اور تربیت کے محکمے کی جانب سے کل دیر شام جاری ایک نوٹیفکیشن کے بعد آج یہ مقدمہ درج کیا۔ اس کے ساتھ ہی سی بی آئی نے ہاتھرس کے مبینہ اجتماعی عصمت دری اور قتل کے معاملے کی تحقیقات کی باضابطہ طور پر ذمہ داری سنبھالی۔سی بی آئی نے معاملے کی تحقیقات کے لئے ایک ٹیم تشکیل دی ہے اور جلد ہی یہ ٹیم موقع پر جاکر اپنا کام شروع کرے گی۔سی بی آئی نے غازی آباد کے جرائم کی روک تھام کے بیورو(اے سی بی) میں تعینات ڈپٹی سپرنٹنڈنٹ پولیس سیما پہوجا کو تفتیشی آفیسر مقرر کیا ہے۔

واضح رہے کہ 14 ستمبر کو ہاتھراس میں ایک 19 سالہ لڑکی کے ساتھ اجتماعی عصمت دری کی گئی تھی، جس نے بعد میں دہلی کے صفدرجنگ اسپتال می علاج دوران دم توڑ دیا تھا۔ ریاستی حکومت نے سی بی آئی انکوائری کی سفارش کی تھی، جس پر مرکزی حکومت نے کل رات گئے مہر ثبت کردی تھی۔

The short URL of the present article is: http://harpal.in/t7R4z

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے خانے پر* نشان لگا دیا گیا ہے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.