Home / اہم ترین / مئی کے وسط تک ہندوستان میں کورونا متاثرین کی تعداد 13 لاکھ تک پہنچ جانے کا اندیشہ: 3امریکی یونیورسٹی کے 13محقیقین کی رپورٹ میں کیا گیا ہے دعوی

مئی کے وسط تک ہندوستان میں کورونا متاثرین کی تعداد 13 لاکھ تک پہنچ جانے کا اندیشہ: 3امریکی یونیورسٹی کے 13محقیقین کی رپورٹ میں کیا گیا ہے دعوی

نئی دہلی(ہرپل نیوز،ایجنسی)26مارچ: ہندستان میں جاریہ سال مئی 14 تک کورونا وائرس کے متاثرین کی تعداد 97ہزارسے 13لاکھ تک پہنچ سکتی ہے۔ ماہرین کی جانب سے جاری کردہ رپورٹ میں ا س بات کا دعوی کیا گیا ہے کہ اب تک ہندوستان میں کورونا وائرس کے پھیلنے کے اعداد و شمار کے علاوہ ملک کی ریاستوں کے موسم اور ان میں آنے والی تبدیلیوں اور ملک کی آبادی و گنجان آبادی والے علاقوں کو پیش نظر رکھتے ہوئے یہ رپورٹ تیار کی گئی ہے اور جس میں اس بات کا دعوی کیا گیا ہے کہ 14 مئی تک ملک میں کورونا وائرس کے متاثرین کی تعداد 97ہزار سے 13لاکھ تک پہنچ سکتی ہے۔ 3 امریکی یونیورسٹیوں کے 13ماہرین نے دنیا میں پھیل رہے کورونا وائرس کی رفتار اور متاثر ہونے والوں کی تعداد کے علاوہ موسموں اور موسمی تبدیلی کے ساتھ تبدیل ہورہے حالات کو نظر میں رکھتے ہوئے یہ رپورٹ تیار کی ہے جس میں اس بات کا خدشہ ظاہر کیا گیا ہے کہ ہندستان ایک کثیر آبادی والی مملکت ہونے کے سبب یہاں متاثرین کی تعداد میں تیزی سے اضافہ ہوتا چلا جائے گا اور اس کو روکنے کیلئے سماجی فاصلہ ہی واحد حل ہے۔ماہرین نے اس رپورٹ میں بتایا کہ موسم گرما کی شدت کے دوران اس وباء کے کم ہونے کے کوئی آثار دستیاب نہیں ہوئے ہیں لیکن عام طور پر رطوبت میں اضافہ کی صورت میں وبائی امراض تیزی سے پھیلنے لگتے ہیں اور اس مطالعہ کے دوران اس بات کا خصوصی خیال رکھا گیا ہے۔ انہو ںنے بتایا کہ اگر ہندستان میں کورونا وائرس کی رفتار موجودہ اعتبار سے ہی پھیلتی رہے گی تو ایسی صورت میں حالات انتہائی نازک ہوسکتے ہیں اسی لئے احتیاطی اقدامات پر سختی سے عمل آوری ناگزیر تصور کی جا رہی ہے۔ اس ٹیم میں شامل واحد ہندستانی محقق بھر مار مکھرجی نے دعوی کیا ہے کہ اگر ہندستان میں اس وباء کو پھیلنے سے نہ روکا گیا تو اس کے سنگین نتائج برآمد ہو سکتے ہیں۔ انہوں نے رپورٹ میں یہ دعوی کیا ہے کہ ہندستان میں موجود دواخانوں اور ان میں موجود بستروں کا جائزہ لیا جائے تو یہ بات سامنے آئی ہے کہ ایک لاکھ افراد کیلئے ہندستان میں 0.7 بستر ہی موجود ہے۔ انہوں نے بتایا کہ کوئی بھی وبا ء یک لخت ختم نہیں ہوتی بلکہ ایک مرتبہ وباء کے خاتمہ کے بعد اس کا دوبارہ احیاء ہوتا ہے اور اس کے بعد وباء مکمل ختم ہوتی ہے۔اسی لئے اس وباء کے خاتمہ پر مطمئن ہوجانا بھی درست نہیں ہے۔ ہندستان میں ممکنہ صورتحال کے متعلق انکشاف کرتے ہوئے رپورٹ میں دعوی کیا گیا ہے کہ ہندستان میں اس وباء پر قابو پانے کیلئے چند ماہ درکار ہوسکتے ہیں اور اس دوران متاثرین کی تعداد 97ہزار 13لاکھ ہونے کا خدشہ ہے۔

The short URL of the present article is: http://harpal.in/831tw

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے خانے پر* نشان لگا دیا گیا ہے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.