Home / اہم ترین / محمدعلی جوہریونیورسٹی پر انہدام کا خطرہ، سپریم کورٹ میں سماعت عنقریب

محمدعلی جوہریونیورسٹی پر انہدام کا خطرہ، سپریم کورٹ میں سماعت عنقریب

نئی دہلی:(ہرپل نیوز؍ایجنسی)24؍مئی:سپریم کورٹ نے حال ہی میں جیل سے رہا ہونے والے ایس پی لیڈر اعظم خان کی درخواست پر اس ہفتے سماعت کرنے پر رضامندی ظاہر کی ہے۔ اس درخواست میں یوپی کے رام پور میں محمدعلی جوہر یونیورسٹی پر بلڈوزر چلنے کے خطرے کو چیلنج کیا گیا ہے۔درحقیقت، الہ آباد ہائی کورٹ نے رامپور کے کلکٹر کو جوہر یونیورسٹی کی جانب سے زمین پر کیے گئے غیر قانونی کاموں کو آزاد کرنے کے ساتھ ساتھ ایک کیس میں ضمانت دینے کا حکم دیا ہے۔ جس کی وجہ سے جوہر یونیورسٹی پر بلڈوزر چلنے کا خدشہ ہے۔

منگل کو اعظم خان کی طرف سے پیش ہوئے سینئر وکیل کپل سبل نے سپریم کورٹ پر زور دیا کہ وہ اس معاملہ کی فوری سماعت کرے۔ اس پر جسٹس ڈی وائی چندر چوڑ اور بیلا ایم ترویدی کی بنچ نے کہا کہ وہ اس ہفتے اس معاملے کی سماعت کرے گی۔ 10 مئی کو الہ آباد ہائی کورٹ نے ایس پی لیڈر خان کو زمین پر غیر قانونی قبضے سے متعلق ایک معاملے میں ضمانت دی تھی۔

یہ معاملہ وقف املاک پر ناجائز قبضے کا ہے۔ الہ آباد ہائی کورٹ نے ضلع کلکٹر رام پور کو ہدایت دینے کے ساتھ ہی اعظم خان پر مختلف شرائط عائد کی ہیں۔کلکٹر کو سنگھن کھیڑا، پرگنہ اور تحصیل صدر، رام پور ضلع میں 13.842 ہیکٹر اراضی کی پیمائش کرنے کی ہدایت دی گئی ہے۔ اس کے بعد اس کی باؤنڈری وال بنائیں اور اس کے ارد گرد خاردار تاریں لگا کر اس کا فزیکل قبضہ حاصل کریں۔

یہ حکم زیادہ سے زیادہ 30 جون 2022 تک ایڈمنسٹریٹر آف اینمی پراپرٹی، ممبئی کے ذریعہ کرنے کی ہدایت کی گئی ہے۔ اعظم خان کو چند روز قبل ضمانت پر رہا کیا گیا تھا۔ وہ فروری 2020 سے اپنے خلاف درج مختلف مقدمات کے سلسلے میں یوپی کی سیتا پور جیل میں بند تھے۔

The short URL of the present article is: http://harpal.in/nhp3I

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے خانے پر* نشان لگا دیا گیا ہے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.