Home / اہم ترین / ممبئی میں بھاری بارش کا ریڈ الرٹ ، اب تک 31 افراد کی موت

ممبئی میں بھاری بارش کا ریڈ الرٹ ، اب تک 31 افراد کی موت

ممبئی: (ہرپل نیوز؍ایجنسی) 18؍جولائی:۔ میٹرو سٹی میں رات بھر ہوئی بھاری بارش کی وجہ سے مکان گرنے کے واقعات میں اب تک 31 لوگوں کی موت ہوگئی ہے ۔ اس کے ساتھ ہی اقتصادی راجدھانی میں موسلادھار بارش کی وجہ سے پانی جمع ہوجانے سے لوکل ٹرینوں کی خدمات بھی متاثر ہیں ۔ اس درمیان وزیر اعلی ادھو ٹھاکرے نے ممبئی کے سٹی کمشنر آئی ایس چہل سے بات کی اور بچاو و راحت رسانی کے کاموں کا جائزہ لیا ۔ انہوں نے افسران کو راحت کے کاموں کیلئے این ڈی آر ایف ، میونسپل ملازمین ، فائر بریگیڈ اور پولیس اہلکاروں کے درمیان بہتر تال میل کو یقینی بنانے کی بھی ہدایت دی ۔

افسران نے بتایا کہ مغربی ریلوے اور وسطی ریلوے نے بھاری بارش کی وجہ سے ممبئی میں مضافاتی ٹرین خدمات کو کچھ وقت کیلئے ملتوی کردیا ہے ۔ نیز طویل مسافت کی دوری کی کئی ٹرینوں کا یا تو روٹ تبدیل کردیا گیا ہے یا ان کو دیگر اسٹیشنوں سے چلایا جارہا ہے ۔ فائر بریگیڈ محکمہ کے ایک افسر نے بتایا کہ ایک پہاڑی علاقہ میں بھاری بارش کی وجہ سے لینڈ سلائیڈ سے ایک کمپلیکس کی دیوار منہدم ہوگئی جس کے نیچے دب کر 17 افراد کی موت ہوگئی ۔

انہوں نے بتایا کہ بھاری بارش کی وجہ سے ممبئی کے وکھرولی مضافاتی علاقہ میں دیر رات تقریبا ڈھائی بجے لینڈ سلائیڈ کی وجہ سے چھ کچے مکانات منہدم ہوگئے جس میں سات لوگوں کی موت ہوگئی اور دو لوگ زخمی ہوگئے ۔ زخمیوں کو نزدیکی اسپتال میں بھرتی کرایا گیا ہے ۔ وہیں مضافاتی علاقہ بھانڈوپ میں ایک دیوار گر جانے سے 16 سالہ ایک لڑکے کی موت ہوگئی ۔

وہیں بھانڈوپ میں پانی صاف کرنے والے کمپلکس میں برساتی پانی داخل ہوجانے کی وجہ سے شہر کے متعدد علاقوں میں پانی کی فراہمی متاثر ہوئی ہے ۔ میونسپل کارپوریشن نے شہریوں سے پانی ابال کر پینے کی اپیل کی ہے۔ چیف انجنئیر ہارڈولک اجے راٹھور نے کہاکہ فوری طور پر سسٹم کو بند کیا گیا اور کمپلکس کی صفائی مہم شروع کی گئی۔ اتوار کو کئی علاقوں میں سپلائی متاثر رہی اور جلد ہی سپلائی بحال کردی جائے گی۔ شہریوں سے پانی ابال کر پینے کی اپیل کی گئی ہے۔

The short URL of the present article is: http://harpal.in/IrRc9

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے خانے پر* نشان لگا دیا گیا ہے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.