Home / اہم ترین / ٹیپو سے متعلق ابواب ہٹانے کے فیصلے پر بوال کے بعدوزیر تعلیم سریش کمار کی وضاحت۔ کہا ۔ نصابِ تعلیم میں تخفیف سے متعلق کوئی حتمی فیصلہ نہیں

ٹیپو سے متعلق ابواب ہٹانے کے فیصلے پر بوال کے بعدوزیر تعلیم سریش کمار کی وضاحت۔ کہا ۔ نصابِ تعلیم میں تخفیف سے متعلق کوئی حتمی فیصلہ نہیں

بنگلورو(ہرپل نیوز، ایجنسی)۳۱۔جولائی ۔ریاستی وزیر تعلیم سریش کمار نے کہا کہ کورونا وائرس اور لاک ڈاؤن کے پیش نظر اسکولی نصاب میں کٹوتی کرنے کے بارے میں غور کیا جارہا ہے۔محکمہ تعلیم کی طرف سے پہلی تا دسویں جماعت کے تمام سبجکٹس میں نصاب 30فیصد تک کم کرنے کے بارے میں مشورہ دیا گیا ہے۔ وزیر تعلیم نے کہا کہ ملک اور ریاست میں کوروناکا قہرابھی جاری ہے۔مریضوں کی تعداد میں لگاتار اضافہ ہورہا ہے۔ روزانہ ہزارو ں کی تعددا میں نئے معاملے سامنے آرہے ہیں۔ ایسے حالات میں ریاست میں اسکول دوبارہ شروع کرنے کے بارے میں کوئی فیصلہ نہیں لیا گیا ہے۔ابھی یہ بات طے نہیں کی گئی ہے کہ کب سے اسکول دوبارہ شروع کئے جائیں۔کورونا وائرس کے حالات قابو میں آنے کے بعد ہی اس سلسلہ میں فیصلہ کیا جائے گا۔انہوں نے کہا کہ میڈیا میں یہ خبریں گردش کررہی ہیں کہ ریاست میں پہلی تادسویں جماعت کے نصاب میں 30فیصد تخفیف کی جارہی ہے۔اس سلسلے میں نصاب کی کتابوں سے ٹیپو سلطان سے متعلق اسباق کے علاوہ جمہوریت اور دستور سے متعلق اسباق ہٹائے جارہے ہیں۔

وزیر تعلیم نے کہا کہ ان خبروں میں کوئی سچائی نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ ابھی یہ فیصلہ بھی نہیں کیا گیا ہے کہ اسکول کب سے شروع کئے جائیں۔ اسکول شروع ہونے کے بعد تدریس کے لئے رواں تعلیمی سال کے دوران کتنے دن فراہم ہوں گے۔یہ تمام باتیں طے کرنے کے بعد ہی اسکولی نصاب میں تخفیف کے بارے میں حتمی فیصلہ کیا جائے گا۔انہوں نے یہ بھی واضح کیا کہ نصاب میں تاریخ کی کتابوں سے اہم شخصیات کے تذکرہ کو ہٹانے کے بارے میں بھی ابھی کوئی حتمی فیصلہ نہیں کیا گیا ہے۔ اس سلسلے میں محکمہ تعلیم کی طرف سے ماہرین کی کمیٹی تشکیل دی جائے گی۔کمیٹی کی سفارشات کی بنیاد پر حتمی فیصلہ کیا جائے گا۔انہوں نے کہا کہ اپوزیشن الزام لگارہی ہے کہ ریاست میں بی جے پی حکومت اسکولی نصاب سے اہم شخصیات کے اسباق ہٹا کر تاریخ کو مسخ کرنے کی کوشش کررہی ہے۔اس سلسلے میں ریاستی حکومت کا کوئی خفیہ ایجنڈا نہیں ہے۔ چند مفاد پرست عناصر سیاسی فائدے کے لئے ایسی افواہیں پھیلا رہے ہیں۔

The short URL of the present article is: http://harpal.in/71Vac

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے خانے پر* نشان لگا دیا گیا ہے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.