Home / اہم ترین / پیگاسس جاسوسی کیس کا فیصلہ آج ، آزادانہ تحقیقات کیلئے درخواست دائر

پیگاسس جاسوسی کیس کا فیصلہ آج ، آزادانہ تحقیقات کیلئے درخواست دائر

نئی دہلی: (ہرپل نیوز؍ایجنسی)26؍اکتوبر:سپریم کورٹ ان درخواستوں پر اپنا حکم کل سنائے گی جس میں پیگاسس جاسوسی کے مبینہ کیس کی آزاد عدالت کی نگرانی میں تحقیقات کا مطالبہ کیا گیا ہے۔ چیف جسٹس کی سربراہی میں تین رکنی بنچ فیصلہ کرے گا۔ بنچ میں چیف جسٹس این وی رمنا، جسٹس سوریہ کانت اور جسٹس ہیما کوہلی شامل ہیں۔

پیگاسس جاسوسی اسکینڈل کی تحقیقات کے حوالے سے بارہ درخواستیں دائر کی گئی تھیں۔ ان میں وکیل ایم ایل شرما، سی پی آئی (ایم) کے ایم پی جان برٹاس، صحافی این رام، آئی آئی ایم کے سابق پروفیسر جگدیپ چوکر، ایس این ایم عابدی، سابق وزیر خزانہ یشونت سنہا اور ایڈیٹرز گلڈ آف انڈیا شامل ہیں۔بتا دیں کہ اس سے پہلے سپریم کورٹ میں 13 ستمبر کو پیگاسس جاسوسی کیس کی سماعت ہوئی تھی۔ سماعت کے دوران مرکزی حکومت نے واضح کیا تھا کہ وہ اس معاملہ میں حلف نامہ داخل نہیں کرے گی۔

حکومت نے کہا تھا کہ یہ عوامی بحث کا ایشو نہیں ہے، اس لیے حلف نامہ داخل نہیں کر سکتی۔ لیکن حکومت نے جاسوسی کے الزامات کی تحقیقات کے لیے ایک پینل قائم کرنے پر اتفاق کیا ہے۔

سپریم کورٹ کے چیف جسٹس این وی رمنا نے حلف نامہ دینے سے انکار کرنے پر پیگاسس معاملہ پر مرکزی حکومت کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ آپ بار بار ایک ہی بات دہرا رہے ہیں۔

ہم جاننا چاہتے ہیں کہ حکومت اب تک کیا کر رہی تھی۔ ہم قومی مفاد کے مسئلہ کو نہیں چھیڑ رہے ہیں ، ہماری فکر عوام کے لئے ہے۔ کمیٹی کا تقرر کوئی مسئلہ نہیں ہے۔ حلف نامہ کا مقصد یہ کہ ہمیں بتایا جائے کہ حکومت کیا کر رہے ہیں۔

سماعت کے دوران بنچ نے کہا تھا کہ ہم دفاع اور سیکورٹی سے متعلق کوئی معلومات نہیں چاہتے۔ جسٹس سوریہ کانت نے کہا کہ ہمارے سامنے عرضی گزار ہیں، جو اسپائی ویئر کے غیر قانونی استعمال کرکے حقوق کی خلاف ورزی کا الزام لگا رہے ہیں،ہم صرف تفصیلی حلف نامہ سے اس معاملہ میں حکومت کا رخ جاننا چاہتے ہیں۔

The short URL of the present article is: http://harpal.in/ChrZD

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے خانے پر* نشان لگا دیا گیا ہے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.