Home / اہم ترین / کیرالہ کے صحافی صدیق کپن اور ساتھیوں کے خلاف امن میں خلل ڈالنے کے شک کا مقدمہ ختم

کیرالہ کے صحافی صدیق کپن اور ساتھیوں کے خلاف امن میں خلل ڈالنے کے شک کا مقدمہ ختم

نئی دہلی : (ہرپل نیوز؍ایجنسی) 17؍جون:۔ کیرالہ کے صحافی صدیق کپن اور ان کے دو ساتھیوں اور ڈرائیور کے خلاف متھرا ایس ڈی ایم عدالت نے امن میں خلل ڈالنے کے شک کا مقدمہ بند کردیا ہے۔ متھرا میں کپپن کے وکیل مدھوبن دت چترویدی نے یہ معلومات دی۔ انہوں نے کہا کہ چونکہ پولیس ان لوگوں سے چھ ماہ تک ان لوگوں کے خلاف امن میں خلل ڈالنے کے شک کوثابت کرنے کے لئے عدالت میں کوئی ثبوت پیش نہیں کرسکی ، لہٰذا مقدمہ بند کردیا گیا۔

قابل ذکر ہے کہ ہاتھرس ریپ کیس کے بعد گذشتہ سال 5 اکتوبر کو کیرالا کے صحافی صدیق کپن اپنے دو ساتھیوں مسعود اور عتیق الرحمان کے ہمراہ ہاتھرس جارہے تھے۔ ان کی گاڑی ٹریول ایجنسی سے لی گئی تھی ، جسے عالم نامی ڈرائیور چلا رہا تھا۔ متھرا پولیس نے کپن اوران کے ساتھیوں اور ڈرائیور کے خلاف سی آر پی سی کی دفعہ 107 ، 116 اور 151 کے تحت مقدمہ درج کرکے جیل بھیج دیا تھا۔

امن میں خلل ڈالنے کے معاملے میں یہ ایک قانون ہے کہ اگر ملزم جیل میں ہے اور 6 ماہ تک پولیس عدالت میں ثبوت کے ساتھ الزام ثابت کرنے میں ناکام رہتی ہے تو اس کا معاملہ ختم ہوجاتا ہے۔ لیکن کپن ، اس کے دو ساتھیوں اور ڈرائیور پر بھی 6 اکتوبر کو یو اے پی اے اور دیگر معاملات میں مقدمہ درج کیا گیا تھا۔

اس معاملے میں پولیس نے ان کے خلاف چارج شیٹ داخل کی ہے اور یہ معاملہ ابھی بھی ایڈیشنل چیف جوڈیشل مجسٹریٹ متھرا کی عدالت میں چل رہا ہے۔

The short URL of the present article is: http://harpal.in/mrShV

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے خانے پر* نشان لگا دیا گیا ہے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.