Home / اہم ترین / گلوکاری کو وقار بخشنے والی لتا منگیشکر نہیں رہیں۔ سنگیت کی دنیا سونی، مداحوں میں سوگ

گلوکاری کو وقار بخشنے والی لتا منگیشکر نہیں رہیں۔ سنگیت کی دنیا سونی، مداحوں میں سوگ

ممبئی ( ہرپل نیوز ، ایجنسی) 6 فروری۔فلمی دنیا کی معروف گلوکارہ لتا منگیشکر نے 92 سال کی عمر میں دنیا کو الوداع کہہ دیا ۔وہ کورونا سے متاثر ہوئی تھیں۔ اس لیے انہیں ممبئی کے بریچ کینڈی اسپتال میں داخل کرایا گیا۔ لتا منگیشکر کو اس سے قبل نومبر 2019 میں سانس لینے میں تکلیف کی شکایت کے بعد بھی اسپتال میں داخل کرایا گیا تھا۔ اس وقت وہ صحت یاب ہوگئی تھیں لیکن اب کی بار جب انہیں یہ تکلیف ہوئی تو وہ زندگی کی جنگ ہار گئیں۔واضح رہے کہ8 جنوری کو لتا منگیشکر کو کورونا مثبت ہونے اور نمونیا جیسی بیماری میں مبتلا ہونے کے بعد ممبئی کے بریچ کینڈی اسپتال میں داخل کرایا گیا تھا۔تب سے اب تک وہ آئی سی یو میں تھی۔بریچ کینڈی اسپتال میں لتا منگیشکر کا علاج کر رہے ڈاکٹر پرتیت سمدانی نے کہا، ’’لتا منگیشکر کا صبح 8.12 بجے انتقال ہو گیا۔ کورونا سے متاثرہ ہونے پر مسلسل 28 دنوں تک داخل اسپتال رہنے کے بعد وہ متعدد اعضا کے ناکام ہونے کے سبب فوت ہوئیں۔‘‘

ان  کی موت پر کئی سیاسی وسماجی شخصیات نے انہیں خراج پیش کیا ہے ۔ شیوسینا لیڈر سنجے راوت نے ٹویٹ کرتے ہوئے لکھا ہے ’’ کہ لتا منگیشکر امر رہے ‘‘۔موسیقی کی دنیامیں لتا منگیشکرکا بڑا نام تھا جسےکبھی فراموش نہیں کیا جا سکے گا۔ لتا منگیشکر نے 78 سال کے کیریئر میں 25 ہزار گانے گائے اور انہیں متعدد اعزازات سے نوازا گیا۔ وہ تین بار کی نیشنل ایوارڈ یافتہ تھیں۔ اس کے علاوہ انہیں دادا صاحب پھالکے ایوارڈ اور بھارت رتن سے بھی نوازا گیا تھا۔کہا جاتا ہے کہ لتا منگیشکر نے 5 سال کی عمر میں کام شروع کیا اور وہ اس عمر میں گھر کی ذمہ داری سنبھالتی تھیں جب بچے کھیلتے اور پڑھتے ہیں۔ اس نے اپنے بہن بھائیوں کے بہتر مستقبل کے لیے کبھی شادی نہیں کی۔ لتا منگیشکراب اس دنیا سے چلی گئیں لیکن ان کے سدابہار گانے ان کے مداحوں کو ان کی یاد دلاتے رہیں گے۔لتا منگیشکر ملک کی سب سے بڑی ہستیوں میں سے ایک تھیں۔ اس نے نہ صرف اپنے جادوئی فن سے سب کو قائل کیا ہے بلکہ وہ سب کی پسندیدہ بھی رہی ۔اب فلم انڈسٹری سمیت ملک بھر اور بیرون ملک سے لتا جی کو خراج عقیدت پیش کیا جا رہا ہے۔ ہر کسی میں غم کی لہر دوڑ گئی ہے۔

The short URL of the present article is: http://harpal.in/7tz8j

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے خانے پر* نشان لگا دیا گیا ہے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.