Home / اہم ترین / گیانواپی سروے: دوسرے دن سروے کا کام مکمل، ہر کونے کی ہوئی فوٹوگرافی

گیانواپی سروے: دوسرے دن سروے کا کام مکمل، ہر کونے کی ہوئی فوٹوگرافی

وارانسی:(ہرپل نیوز؍ایجنسی)16؍مئی: عدالتی حکم پر ہفتہ کو گیانواپی کیمپس میں ایک تازہ سروے کیا جا رہا ہے۔ اتوار کو گیان واپی میں دوسرے دن سروے کیا گیا۔ دوپہر ایک بجے کے بعد ایڈوکیٹ کمشنر اور ان کی ٹیم اور مدعی فریق کے لوگ احاطے سے باہر آئے۔

آج بھی سروے کا کام مکمل نہیں ہوا۔مدعی کے وکیل ہری شنکر جین اور سدھیر ترپاٹھی نے بتایا کہ سروے پیر کو بھی ہوگا۔ آج کے سروے میں کسی قسم کی کوئی پریشانی نہیں تھی۔ اس کے ساتھ ہی ٹیم کے جانے کے بعد گودولیا -میداگن سڑک کھول دیا گیا۔

ضلع مجسٹریٹ کوشل راج شرما نے کہا کہ کمیشن کی کارروائی پرامن ماحول میں آسانی سے سروے ہوا ۔ کورٹ کمیشن کی جانب سے اتوار کے سروے کے بعد فیصلہ کیا گیا ہے کہ یہ کارروائی پیر کو بھی جاری رہے گی۔ذرائع کے مطابق ابھی کچھ حصوں کا سروے ہونا باقی ہے۔ آج سروے کے دوران اندر سے کچھ ملبہ ملا۔ جس کی صفائی کی جا رہی ہے۔

جنوبی اور شمالی حصوں کے علاوہ باقی ماندہ مغربی دیوار اور مسجد کے بالائی حصے میں بھی سروے کیا گیا ہے۔ کھدی ہوئی گنبد سمیت تین کمروں کا سروے کیا گیا۔ اس دوران کیمپس کے ہر کونے کی تصویر کشی کی گئی۔یہاں سروے میں کیا پایا گیا اس کے بارے میں کوئی معلومات نہیں ہے۔
ل
یکن قیاس آرائیوں کا دور تیز ہو گیا ہے۔ پولیس سوشل میڈیا پر کڑی نظر رکھے ہوئے ہے۔ ہفتہ کے مقابلے آج سیکورٹی کا نظام زیادہ سخت تھا۔ ذرائع کے مطابق مدعی اور فریقین کے کل 52 ارکان بشمول ایڈوکیٹ کمشنر (کورٹ کمشنر) احاطے میں داخل ہوئے۔

پولس کمشنر اے ستیش گنیش خود سیکورٹی انتظامات کا جائزہ لینے پہنچے تھے، انہوں نے بتایا کہ آج سیکورٹی کچھ زیادہ بڑھا دی گئی ہے۔ہفتہ کی طرح سب کے موبائل باہر جمع تھے۔ کارروائی کے دوران مسلم فریق کا بھرپور تعاون حاصل رہا ہے ، نیز تہہ خانے کے اندرونی حصے، مذہبی شعائر، نمونے اور ستونوں کی ویڈیو گرافی بھی کی گئی۔

چار گھنٹے کی کارروائی کے بعد ٹیم کے ارکان ایک ایک کرکے دوپہر 12 بجے سے پہلے مسجد کے احاطے سے باہر آگئے۔اس سے قبل 6 مئی کو سروے کی کارروائی شروع ہوئی تھی۔ احتجاج اور ہنگامہ آرائی کے درمیان 7 مئی کو کارروائی روک دی گئی۔ 12 مئی کو عدالت نے دوبارہ سروے کا حکم دیا۔ سروے کی رپورٹ 17 مئی کو عدالت میں پیش کی جائے گی۔

The short URL of the present article is: http://harpal.in/qAXWg

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے خانے پر* نشان لگا دیا گیا ہے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.