Home / اہم ترین / گیان واپی مسجد معاملہ:تیسرے روز کا سروے مکمل، مبینہ طور پر وضو خانہ کے حوض میں ’شیولنگ ‘کی موجودگی کادعویٰ۔ وضو خانے کو سیل کرنے کا وارانسی کورٹ کا حکم ، مسلم فریق نے کیا حکم کیخلاف کورٹ میں جانے کا اعلان

گیان واپی مسجد معاملہ:تیسرے روز کا سروے مکمل، مبینہ طور پر وضو خانہ کے حوض میں ’شیولنگ ‘کی موجودگی کادعویٰ۔ وضو خانے کو سیل کرنے کا وارانسی کورٹ کا حکم ، مسلم فریق نے کیا حکم کیخلاف کورٹ میں جانے کا اعلان

وارانسی:(ہرپل نیوز؍ایجنسی)16؍مئی: گیان واپی مسجد سروے کیس میں یوپی کی وارانسی عدالت نے گیانواپی مسجد کمپلیکس میں تالاب کو سیل کرنے کا حکم دیا ہے، جہاں مبینہ طور پر شیولنگ پائے جانے کا ہندو فریق نے دعویٰ کیا ہے ۔ معلومات کے مطابق گیانواپی مسجد سروے کے دوران مسجد کے اوپری حصے میں جہاں نماز پڑھی جاتی ہے، اس کے قریب وضو کرنے کی جگہ ہے۔ جس کے لیے ایک چھوٹا حوض بنایا گیا ہے۔ اسی وضوخانے کے حوض میں شیولنگ ملنے کا فسطائی دعویٰ کیا گیا ہے۔ شیولنگ ملنے کے بعد ہندو فریق ضلعی عدالت پہنچ گیا۔

بنارس کی عدالت نے حکم دیا ہے کہ جس جگہ سے شیولنگ ملا ہے اسے سیل کر دیا جائے۔ عدالت نے وارانسی ضلع انتظامیہ کو یہ حکم دیا ہے۔ عدالت نے اس جگہ پر کسی کی نقل و حرکت پر بھی پابندی لگا دی ہے جہاں وضو خانے کے حوض میں مبینہ طو رپر’ شیولنگ ‘ ہونے کا دعویٰ کیا جار ہا ہے۔ہندو درخواست گزار کے وکیل سبھاش نندن چترویدی نے کہا کہ ہم نے کل ہی اعتراض درج کرایا تھا۔ ہم نے وضوخانے کا پانی سوکھا ہوا دیکھنا چاہا، آج ہم نے اپنی آنکھوں سے دیکھا کہ وہاں شیولنگ ہے۔ ہم نے یہ بات باہر بول کر یا عدالت میں جا کر کوئی توہین نہیں کی۔

ہم نے عدالت میں مطالبہ کیا کہ اس تالاب کو سیل کیا جائے۔ مسلم فریق عدالت میں جانے کے لیے آزاد ہے۔دوسری جانب مسلم فریق کے وکیل آلوک ناتھ یادو نے کہا کہ میں نے ابھی حکم کی کاپی پڑھی ہے، ہم تالاب کو سیل کرنے کے حکم کو منسوخ کرنے کے لیے عدالت سے رجوع کریں گے۔ ہم تمام قانونی کارروائی کریں گے۔ دراصل آج گیانواپی شرینگر گوری مسجد کے تیسرے دن کا سروے مکمل ہو گیا ہے اور کل سروے کی رپورٹ عدالت میں پیش کی جائے گی۔

وہیں بنارس کورٹ میں ہندو خواتین کی نمائندگی کرنے والے وکیل نے دعویٰ کیا ہے کہ مسجد کے احاطے کے اندر وضوخانے کے حوض میں ایک مبینہ طور پر شیولنگ ملا ہے۔ ایڈوکیٹ سبھاش نندن چترویدی کا کہنا ہے کہ تالاب کا استعمال ’شدھی کرن‘ کیلئے کیا جاتا تھا ۔خیال رہے کہ گیانواپی مسجد میں سروے کیخلاف مسجد کمیٹی کی عرضی کی سماعت بھی کل سپریم کورٹ میں ہونے والی ہے۔ جسٹس ڈی وائی چندر چوڑ اور جسٹس پی ایس نرسمہا کی بنچ اس عرضی پر سماعت کرے گی۔ گیانواپی تنازعہ کیس میں درخواست گزار انجمن انتظامیہ مسجد کمیٹی نے گیانواپی میں سروے پر پابندی لگانے کا مطالبہ کیا ہے۔

The short URL of the present article is: http://harpal.in/UMYXo

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا. ضرورت کے خانے پر* نشان لگا دیا گیا ہے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.